انتخابات میں مبینہ دھاندلی پر ن لیگ کا ایک بار پھر پارلیمانی کمیشن بنانے کا مطالبہ

انتخابات میں مبینہ دھاندلی پر ن لیگ کا ایک بار پھر پارلیمانی کمیشن بنانے کا مطالبہ
فوٹو فائل

لاہور: مسلم لیگ ن کے رہنما اور رکن قومی اسمبلی خواجہ آصف نے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسمبلی میں بات کرنے کی اجازت نہیں ہے ورنہ ہم حکومت کو ان کا کیا ہوا وعدہ یاد دلا دیتے، نئی حکومت کی شروعات ہی غلط ہو رہی ہے۔


ان خیالات کا اظہار وہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کر رہے تھے، انھوں نے کہا ’ایک ماہ ہو گیا مگر حکومت کا وعدہ وفا نہیں ہوا، ہمیں اسمبلی میں بات کرنے کی اجازت نہیں ہے۔‘خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ حکومت کی جانب سے انتخابات میں دھاندلی پر کمیشن بنانے کا کہا گیا تھا، ایک ماہ ہوا کمیشن نہیں بنا۔

سابق وزیرِ خارجہ نے حکومت سے الیکشن میں مبینہ دھاندلی پر پارلیمانی کمیشن بنانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم مبینہ دھاندلی کے معاملے کو کل پھر اٹھائیں گے۔خواجہ آصف نے کہا کہ اپوزیشن جماعتوں کو واک آؤٹ کرنے پر مجبور کیا گیا، اپوزیشن جماعتیں اپنا مؤقف عوام تک پہنچانا چاہتی ہیں۔

خیال رہے کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما انتخابات کے بعد سے دھاندلی کی تحقیقات کا مطالبہ کرتے آ رہے ہیں، جب کہ وزیرِ اعظم عمران خان نے بھی کہا تھا کہ جہاں جہاں اپوزیشن چاہتی ہے حلقے کھلوا لیں گے۔ایک ہفتے قبل سابق وزیر اعلیٰ پنجاب اور مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے بھی کہا تھا کہ الیکشن میں دھاندلی کی تحقیقات کے لیے کمیشن بنایا جائے، کمیشن بننے تک حکومت کو کام نہیں کرنے دیں گے۔