امریکی فوج کا بڑا سکینڈل سامنے آگیا،سپاہی شرمناک کام کرتے رنگے ہاتھوں پکڑا گیا

امریکی فوج کا بڑا سکینڈل سامنے آگیا،سپاہی شرمناک کام کرتے رنگے ہاتھوں پکڑا گیا

واشنگٹن:امریکی فوج میں اپنی نوعیت کا پہلا اسکینڈل سامنے آ گیا۔امریکی فوج میں متعدد فحش سکینڈلز سامنے آتے رہے ہیں مگر امریکی بحریہ کے معروف فوجی کااسکینڈل سامنے آنے کے بعد ہنگامہ کھڑا ہوگیا ہے۔23 سال کا تجربہ رکھنے والا امریکی بحریہ کا سپاہی ملازمت کیساتھ فحش فلموں میں اپنی اہلیہ اور دیگر اداکاراﺅں کے ساتھ’پارٹ ٹائم‘ کام کرنے کا انکشاف ہوا ہے جس پر فوجی حکام نے اس کے خلاف تحقیقات شروع کر دی ہیں۔


نیوی چیف سپیشل وار فیئر آفیسر جوزف جون شمٹ III عرف ”جے ووم“ امریکی بحریہ کا سپاہی ہے جس نے ملازمت کے دوران خوب نام کمایا اور اس کے ساتھ ہی  29 فحش فلموں اپنی ”اداکاری کے جوہر“ بھی دکھائے اور یہ ”کارنامہ“ اس نے اپنی اہلیہ کے ساتھ مل کر کیا جو خود بھی فحش فلموں کی اداکارہ ہے۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق شمٹ نے مبینہ طور پر اپنی رئیل سٹیٹ کمپنی کیلئے حاصل کئے گئے بڑے قرضے واپس کرنے کی غرض سے فحش فلموں میں کام کا آغاز کیا۔ شمٹ کی اہلیہ جیڈ کا کہنا ہے کہ ”اس نے ہماری فیملی کی مدد کی۔ اس کی وجہ سے ہمیں بہت سارے مالی مسائل سے چھٹکارا ملا۔“ 

دوسری جانب یہ الزامات سامنے آنے کے بعد یہ تعین کرنے کیلئے محکمانہ تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے کہ آیا شمٹ فوج کے علاوہ دوسرے کام سے متعلق حکام کو نہ بتا کر نیوی سیل کے قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کا مرتکب ہوا یا پھر اس کے سینئرز نے خاموشی سے اسے معاف کئے رکھا۔ 

دلچسپ امر یہ ہے کہ شمٹ کی ریٹائرمنٹ میں صرف 8مہینے ہی باقی رہ گئے ہیں مگر ان الزامات کے باعث ان کی پنشن اور دیگر مراعات خطرے میں پڑ گئی ہیں۔ بحریہ حکام نے شمٹ کو نوکری کے علاوہ ہربل سپلیمنٹ بیچنے کی اجازت نہیں دی تھی اور یہ الزام عائد کیا تھا کہ فحش فلموں میں اداکاری سے متعلق اس نے کوئی بھی دستاویزات جمع نہیں کرائیں۔واضح رہے کہ اس سے پہلے بھی امریکی فوج میں متعدد فحش سکینڈلز سامنے آتے رہے ہیں مگر یہ اپنی نوعیت کا پہلا سکینڈل ہے کیونکہ کسی بھی فوجی نے اس سے پہلے فحش فلموں میں اداکاری نہیں کی تھی۔ 

نیوویب ڈیسک< News Source