'میں نہیں تو جمہوری عمل بھی نہیں، نواز شریف کی یہ سوچ خطرناک ہے'

'میں نہیں تو جمہوری عمل بھی نہیں، نواز شریف کی یہ سوچ خطرناک ہے'

لاہور:  پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ عدالت نے فیصلہ کر دیا ہے تو نواز شریف مان کیوں نہیں لیتے ہم بھی تو ایک وزیراعظم کو ہٹا کر دوسرا لے آئے تھے۔ نواز شریف کی یہ سوچ خطرناک ہے کہ میں نہیں تو جمہوری عمل بھی نہیں۔


آصف زرداری کا کہنا تھا کہ ہمیشہ سیاسی قوتوں کے ساتھ کھڑا ہوا اور انہیں اکٹھا کرنے کی کوشش کی ہم نے جمہوری عمل کو ہمیشہ چلنے دیا اور مضبوط کیا اس لیے ملک میں جمہوری عمل کو چلنے دیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ نوازشریف تو مشرف سے سمجھوتا کر کے چلے گئے جیل تو میں نے کاٹی جب کہ ذرا سا اشارہ دیتے تو جنرل مشرف سے سب کچھ لے سکتا تھا۔ سابق صدر کا کہنا تھا کسی ایک شخص کو بچانے کے لیے کیسا گرینڈ ڈائیلاگ کیونکہ گرینڈ نیشنل ڈائیلاگ کی جگہ تو پارلیمنٹ ہے۔

آصف زرداری کا کہنا تھا کہ اعتزاز احسن جو بولتے ہیں وہ میری آواز ہے جب کہ رضا ربانی آزاد دانشور ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے بھائی کے انتقال پر تعزیت کے لیے ان کے پاس جانا چاہتا تھا لیکن غیر سیاسی قوتوں کو خوش کرنے کے لیے نواز شریف نے ملنے سے انکار کر دیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ 2013 کے انتخابات میں آر اوز مینڈیٹ کو تسلیم نہ کرتا تو بڑا بحران پیدا ہو جاتا۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں