جاری خسارہ کم ہو کر 4.4 فیصد رہ گیا ہے، وزارتِ خزانہ

جاری خسارہ کم ہو کر 4.4 فیصد رہ گیا ہے، وزارتِ خزانہ
مالی سال کے ابتدائی 6 ماہ میں برآمدات 2 فیصد بڑھیں، ترجمان وزارتِ خزانہ۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: ترجمان وزارتِ خزانہ ڈاکٹر خاقان نجیب کے مطابق رواں مالی سال کی پہلی ششماہی میں معاشی اعشاریہ بہتر رہے اور جولائی تا دسمبر ترسیلات زر میں 10 فیصد اضافہ ہوا۔


ترجمان نے بتایا کہ دسمبر 2018 میں بیرونی سرمایہ کاری دسمبر 2017 سے بہتر رہی اور تجارتی خسارہ گزشتہ مالی سال کی پہلی ششماہی سے 5 فیصد زائد ہے۔

ترجمان وزارتِ خزانہ کے مطابق مالی سال کے ابتدائی 6 ماہ میں برآمدات 2 فیصد بڑھیں۔ جولائی تا دسمبر درآمدات 2 فیصد کم ہوئیں جب کہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کیے جانے سے 1994 ٹیرف لائن کی درآمدات 23 فیصد کم ہوئیں۔

ڈاکٹر خاقان نجیب کا کہنا تھا کہ بیرونی کھاتوں پر دباؤ کم ہو رہا ہے اور 6 مہینوں میں جاری خسارہ کم ہو کر 4.4 فیصد رہ گیا ہے۔ نجی شعبے نے 6 مہینوں میں 496 ارب روپے قرض لیا اور گزشتہ مالی سال کی پہلی ششماہی میں نجی شعبے 232 ارب روپے قرض لیا گیا تھا۔ مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں زرعی شعبے کو 36 فیصد زائد 212 ارب روپے قرض دیا گیا۔