سعودی عرب نے قطر کو ایک اور جھٹکا دینے کی تیاری شروع کر دی

دوحہ :سعودی حکومت کی طرف سے قطر کے مختلف قبائل پر دوبارہ متحد ہونے کے لیے دباﺅڈالا جا رہا ہے اور اس طریقے سے وہ قطر میں حکومتی ڈھانچے کو غیرمستحکم کرنے کی بھی کو شش کر رہا ہے۔


تفصیلات کے مطابق سعودی عرب اور قطر کا تنازع ختم ہونے کی بجائے آئے روز سنگین تر ہوتا جا رہا ہے اور فریقین کی طرف سے ایک دوسرے پر نئے الزامات سامنے آ رہے ہیں۔اب الجزیرہ کی رپورٹ کے مطابق قطری وزیرخارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمن الثانی نے سی این بی سی کو انٹرویو دیتے ہوئے الزام عائد کیا ہے کہ سعودی عرب قطری حکومت کو ہلانے اور غیرمستحکم کرنے کے لیے ہتھکنڈے استعمال کر رہا ہے۔سعودی عرب کے حکومتی عمال قطر میں حکومت کی تبدیلی کی باتیں کر رہے ہیں۔ 

رپورٹ کے مطابق محمد عبدالرحمن الثانی کا کہنا تھا کے سعودی حکومت کی طرف سے قطر کے مختلف قبائل پر دوبارہ متحد ہونے کے لیے دباﺅ ڈالا جا رہا ہے اور اس طریقے سے وہ قطر میں حکومتی ڈھانچے کو غیرمستحکم کرنے اور اسے تبدیل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ سعودی عرب اور دیگر ممالک کا ہم سے بائیکاٹ دہشت گردی کو ختم کرنے کے لیے نہیں بلکہ ہم پر دھونس جمانے کے لیے کیا گیا۔

انکا کہنا تھا کہ ہمارادہشت گرد تنظیموں کی مالی معاونت سے کوئی تعلق نہیں۔وہ صرف ہمارے ملک میں حکومتی ڈھانچہ تبدیل کرنا چاہتے ہیں۔ اس بائیکاٹ کا الٹا اثر یہ ہو رہا ہے کہ اس سے شام و عراق میں داعش کے خلاف لڑائی میں شدید رکاوٹ آ رہی ہے۔