سعودی عرب، سال رواں کے اختتام سے قبل پٹرول اور بجلی پر سبسڈی ختم ہو جائے گی

سعودی عرب، سال رواں کے اختتام سے قبل پٹرول اور بجلی پر سبسڈی ختم ہو جائے گی

ریاض : سعودی عرب میں توانائی کے ماہرین نے توقع ظاہر کی ہے کہ سال رواں کے اختتام سے قبل پٹرول اور بجلی کیلئے مقرر سبسڈی ختم کردی جائے گی۔ سعودی اخبار کے مطابق بینک آف امریکا میری لنچ نے بتایا ہے کہ سعودی عرب میں پٹرول کے نرخوں میں اصلاحات کے عمل سے نجکاری کو تقویت ملے گی۔


اس کاپہلا مرحلہ سال رواں کے اختتام سے قبل ہی شروع ہوجائے گا۔ دریں اثناءسعودی بجلی کمپنی نے اثاثوں میں سرکاری حصص کے اندراج کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ بجلی کمپنی کے اثاثوں کی کل مالیت کا 74.31 فیصد حصہ حکومت کا ہے۔ 3.096 ملین حصص حکومت کے ہیں۔ اس اقدام کو بجلی اور پٹرول کیلئے مقرر سبسڈی کے خاتمے کی تمہید کے مترادف قرار دیا جارہا ہے۔

سعودی حکومت بجلی کمپنی کے حصص سے ہونے والی آمدنی سے دستبرداری کا اعلان کرچکی ہے جبکہ سعودی بجلی کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ سالانہ فی حصص 70 ہلالہ ہی حصص کے مالکان کو دے گی۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ حصص کے منافع سے سرکاری دستبرداری کی بدولت ملنے والی رقم 2.1 ارب ریال تقسیم نہیں کی جائے گی۔