اسرائیلی وزیر کا فلسطینی قیدیوں کو پھانسی دینے کا مطالبہ

مقبوضہ بیت المقدس : اسرائیلی حکومت کے وزیر برائے انٹلیجنس وٹرانسپورٹ یسرائیل کاٹز نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فلسطینی قیدیوں کو پھانسی دینے کے قانون کو فعال کرے اور تمام فلسطینی اسیران کو پھانسی دے دی جائے۔اطلاعات کے مطابق حکمراں جماعت ’لیکوڈ‘ سے تعلق رکھنے والے اسرائیلی وزیر نے فلسطینی اسیران کی اجتماعی بھوک ہڑتال پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا۔
اپنے حقوق اور اسیری کے حالات بہتر بنانے کا مطالبہ کرنے والے بھول گئے کہ ان کے حملوں میں کتنے یہودی ہلاک ہوئے۔ مقتولین کے ورثاءکیا سوچیں گے کہ ان کے پیاروں کے قاتلوں کو جیلوں میں بھی وی آئی پی سہولتیں دی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ فلسطینی اسیر لیڈر مروان البرغوثی نے بھوک ہڑتال شروع کی ہے اور کہا ہے کہ اسیران کو سہولیات فراہم کی جائے۔
میں کہتا ہوں کہ فلسطینی قیدیوں کو سہولیات کے بجائے پھانسی دی جائے۔ ان کے مطالبات کا صرف ایک ہی حل ہے اور وہ سزائے موت ہے۔یسرائیل کاٹز نے کہا کہ فلسطینی اسیران کو پھانسی کی سزا دینے کے قانون کو فعال کرنا ضروری ہے۔