مصر میں خواتین کو ”ویاگرا“ استعمال کرنے کی اجازت مل گئی

مصر میں خواتین کو ”ویاگرا“ استعمال کرنے کی اجازت مل گئی
فوٹو:بشکریہ ٹوئٹر

قاہرہ : مصر نے خواتین کو جنسی خواہشات بڑھانے والی دواء”ویاگرا “ کے استعمال اور خرید و فروخت کی اجازت دے دی ہے۔


برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کی رپورٹ کے مطابق مصر خواتین کی جنسی خواہش بڑھانے والی ادویات کی تیاری اور فروخت کی اجازت دینے والا پہلا عربی ملک بن گیا ہے۔۔مصری دوا ساز کمپنی کے مطابق اس دوا کو خواتین کی ویاگرا کہنا نامناسب ہے ، یہ نام ہم نے نہیں بلکہ مقامی میڈیا نے دیا ہے۔ دوسری جانب مصری ڈاکٹر کا کہنا خواتین کی ویاگرا کہنا ایک گمراہ کن اصطلاح ہے جنھوں نے اس دوا کا نسخہ اپنے کسی بھی مریض کو لکھ کر دینے سے انکار کیا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ دوا کبھی بھی اس خاتون پر موثر نہیں ہو گی جس کو کسی بھی نفسیاتی یا جسمانی مسائل کا سامنا ہے۔ماہرین صحت کے مطابق جہاں یہ دواءمردانہ کمزوری کو دور کرنے کے لیے خون کے بہاوکو بہتر بناتی ہے، وہیں خواتین کی ویاگرا کو اینٹی ڈپریسنٹ اور دماغ میں کیمکلز کو متوازن کر کے جنسی خواہشات بڑھانے کے لیے تیار کیا گیا ہے۔

خواتین کی ویاگرا یا فلبانسیرن کو خواتین کے لیے ’گلابی گولی ’ کے طور پر دکھایا گیا جو کہ مصر میں مردوں کے لیے ملنے والی ویاگرا کی نیلی گولی کے مقابل ہے۔ ماہر صحت نے اس دوا سے متعلق خبردار کرتے ہوئے کہا ہءکہ اس دوا کی افادیت اس کے نقصان کے مقابلے میں بہت کم ہے انھوں نے خبردار کیا کہ ’بلڈ پریشر کا گرنا بہت سنگین مسئلہ ہے۔