عدالت کا خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کو گرفتار کرنے کا حکم

عدالت کا خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کو گرفتار کرنے کا حکم

اسلام آباد: انسداد دہشت گردی کی عدالت نے فیض آباد دھرنا کیس میں تحریک لبیک کے خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کو گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج شاہ ارجمند نے فیض آباد دھرنا کیس کی سماعت کی۔ عدالت کی جانب سے چالان پیش کرنے کے حکم کے باوجود پولیس حتمی چالان پیش نہ کر سکی جس پر عدالت نے شدید برہمی کا اظہار کیا۔


مزید پڑھیں: عمران خان اور آصف زرداری کرپشن کے بے تاج بادشاہ ہیں، عابد شیر علی

عدالت نے بار بار طلبی اور مفرور قرار دیئے جانے کے بعد بھی پیش نہ ہونے پر تحریک لبیک کے خادم حسین رضوی اور افضل قادری کو گرفتار کر کے پیش کرنے کا حکم جاری کیا۔ عدالت نے خادم حسین رضوی کا مفرور ملزم کا اسٹیٹس بھی برقرار رکھا ہے۔

مزید برآں عدالت نے پولیس کو حکم دیا کہ 4 اپریل تک ملزمان کے خلاف مقدمے کا حتمی چالان جمع کرایا جائے۔

گزشتہ سماعت پر پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا تھا کہ مولانا خادم حسین رضوی سمیت چار ملزمان کے خلاف مقدمات درج ہیں لیکن بار بار طلبی کے باوجود ملزمان عدالت میں پیش نہیں ہو رہے۔

 

یہ خبر پڑھیں: نواز شریف سے شہباز شریف کی ملاقات، اہم امور پر تبادلہ خیال

پراسیکیوٹر نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ ملزمان کو مفرور قرار دیا جائے اور اس کے باوجود عدم حاضری کی صورت میں اشتہاری ٹھہرایا جائے۔

یاد رہے گزشتہ سال نومبر میں اسلام آباد کے فیض آباد پر تحریک لبیک کی جانب سے دھرنا دیا گیا جو تقریباً 22 روز بعد ختم ہوا جب کہ اس دوران توڑ پھوڑ اور پولیس اہلکاروں پر حملے کے مقدمات بھی درج کیے گئے۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں