منشیات اور بارودی مواد کا سراغ لگانے والا ڈرون تیار

منشیات اور بارودی مواد کا سراغ لگانے والا ڈرون تیار

تل ابیب: اسرائیلی کمپنی نے ایک ایسا ڈرون تیا رکر لیا ہے جو کئی کلومیٹر کی دوری سے منشیات اور بارودی مواد کو ڈھونڈ کر اس کی شناخت کرسکتا ہے۔تفصیلات کے مطابق، اسرائیلی کمپنی کے تیارکردہ اس ڈرون کو ”اسپیکٹروڈرون‘ کا نام دیا گیا ہے جو مختلف ویولینتھ ( طول موج) کی لیزر شعاعیں خارج کرتا ہے۔ اس میں موجود لیزر رینج فائنڈر، تفصیلی کیمرہ، اسپیکٹرومیٹر اور سافٹ ویئر اور الگورتھم کے باعث خطرناک اجزا کی شناخت ممکن ہو پاتی ہیں۔ ڈرون پرنصب شدہ یہ خودکار نظام کسی بھی خطرے کا تجزیہ کرتا ہے اور 3 کلومیٹر کے دائرے کا جائزہ لیتے ہوئے فورا اس کی اطلاع کنٹرول روم تک پہنچاتا ہے۔


ڈرون میں جدید اسپیکٹروسکوپی تکنیک استعمال کی جاتی ہے جس میں ایل ائی بی ایس، رامن اسپیکٹرواسکوپی اور فلوریسنس ( چمک) پھانپنے والے نظام سے مدد لی جاتی ہے۔

ایل ڈی ایس کے سربراہ کے مطابق یہ دہشتگردی کے خلاف استعمال ہونے والی ایکشاندار اور قابلِ اعتبار ٹیکنالوجی ہے۔ یہ دنیا کا واحد ڈرون ہے جو لیزر اور دیگر سافٹ ویئر کی مدد سے دھماکا خیز مواد اور دیگر مضر اشیا ءکی شناخت کرسکتا ہے۔

جدید ٹیکنالوجی کی بدولت اس ڈرون کے ذریعے سےٹھوس، مائع اور گیس کی صو رت میں موجود دھماکا خیز مواد اور زہریلے مواد کی شناخت کی جا سکتی ہے۔ اس ڈرون کو فوجی اور شہری دونوں مقاصد کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے۔ کسی بھی خطرے کی صورت میں یہ کنٹرول روم تک تفصیلی تصاویر اور معلومات روانہ کرتا ہے۔ اس کا لیزر سسٹم کسی روبوٹ اور کار پر بھی نصب کیا جاسکتا ہے۔