پی ٹی آئی کارکنوں پر تشدد کرنے والوں کیخلاف بھرپور ایکشن جاری ہے: وزیر داخلہ پنجاب

پی ٹی آئی کارکنوں پر تشدد کرنے والوں کیخلاف بھرپور ایکشن جاری ہے: وزیر داخلہ پنجاب

لاہور: وزیر داخلہ پنجاب کرنل ریٹائرڈ ہاشم ڈوگر نے کہا ہے کہ 25 مئی کو پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کارکنوں پر تشدد کرنے والوں کے خلاف کارروائیاں جاری ہیں۔ آئندہ کوئی بھی افسر سیاسی وفاداری کی خاطر ماورائے قانون اقدام اٹھانے کی غلطی نہ کرے۔ 

تفصیلات کے مطابق ہاشم ڈوگر نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ پنجاب اسمبلی میں تشدد کے واقعات میں ملوث افراد کے خلاف مقدمات درج ہیں، پولیس سرچ وارنٹ کے ساتھ ملوث افراد کی گرفتاریوں کیلئے کارروائی کر رہی ہے جبکہ پنجاب اسمبلی میں تشدد، توڑ پھوڑ اور ماورائے قانون سرگرمیوں پر 11 ایم پی ایز کے خلاف مقدمات درج کر لئے ہیں۔ 

ان کا کہنا تھا کہ 25 مئی اور ضمنی انتخابات میں اختیارات سے تجاوز کرنے پر افسران عہدوں سے ہٹا دئیے، سی سی پی او لاہور، ڈی آئی جی آپریشنز، ڈی آئی جی انویسٹی گیشن کو عہدے سے ہٹا دیا گیا، 30 انسپکٹرز کو فوری طور پر معطل اور نوکریوں سے برخاست کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ پولیس قواعد و ضوابط کے مطابق سرچ وارنٹ کے ساتھ ان کی گرفتاریوں کیلئے کارروائی کر رہی ہے، جن پولیس افسران نے 25 مئی اور ضمنی انتخابات کے دوران اختیارات سے تجاوز کیا، انہیں ان کے عہدوں سے ہٹا کر کلوز کر دیا گیا ہے۔ 

وزیر داخلہ پنجاب نے کہا کہ 4 ایس پیز اور 7 ڈی ایس پیز بھی معطل کر کے معاملے کی اعلیٰ سطح پر انکوائری کرائی جا رہی ہے جبکہ فیصل آباد میں خواتین پر بندوق تاننے والے سب انسپکٹر کو بھی نوکری سے برخاست کر دیا گیا ہے۔ 

ان کا مزید کہنا تھا کہ آئندہ کوئی بھی افسر سیاسی وفاداری کی خاطر ماورائے قانون اقدام اٹھانے کی غلطی نہ کرے، اختیارات سے تجاوز کرنے والوں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جا رہی ہے۔ 

مصنف کے بارے میں