برطانیہ کے کرنسی نوٹ پر پہلی مرتبہ مسلم خاتون کی تصویر چھاپنے کی تجویز

برطانیہ کے کرنسی نوٹ پر پہلی مرتبہ مسلم خاتون کی تصویر چھاپنے کی تجویز
Image by Virily


لندن : برطانیہ کے”بینک آف انگلینڈ“ نے کرنسی نوٹ پر پہلی مرتبہ مسلم خاتون کی تصویر جاری کرنے کی تیاری شروع کردی۔

50 پونڈ کے کرنسی نوٹ پر اس وقت برطانیہ کی ملکہ الزبتھ دوم کی تصویرموجود ہے۔نورالنسا عنایت نامی مسلم خاتون نے دوسری جنگ عظیم کے دوران فرانس میں رہتے ہوئے برطانوی افواج کیلئے جاسوسی کے فرائض انجام دیئے تھے۔

نور کے شان دار کارنامے کے سبب بینک آف انگلینڈ کی جانب سے شخصیات کے انتخاب میں معاونت پر مامور مورخین نے 50 پونڈ کے کرنسی نوٹ پر نور کی تصویر چھاپنے کی تجویز پیش کی۔یکم جنوری 1914ءکو روس کے دارالحکومت ماسکو میں پیدا ہونے والی نور النساءکے والدین کا تعلق ہندوستان سے تھا۔ان کے والد عنایت خان 18 ویں صدی میں سلطنت خداداد میسور ریاست کے حکمران ٹیپو سلطان کے پڑپوتے تھے۔

نور النساءنے 19 نومبر 1940ءمیں خواتین کی ضمنی ایئر فورس WAAF میں کلاس 2 ایئر کرافٹ افسر کے طور پر شمولیت اختیار کی اور برطانیہ کی جانب سے جرمنی کے خلاف کام کرنے والی پہلی خاتون ”وائرلیس آپریٹر“ بنیں۔نور کو 13 اکتوبر 1943ءمیں پیرس میں جاسوسی کے الزام میں گرفتار کیا گیا۔ ایک عسکری کیمپ میں 10 ماہ تک تشدد کا نشانہ بنانے کے باوجود منہ نہ کھولنے پرا±ن کے سر پر گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا، اس وقت نور کی عمر صرف 29 برس تھی۔

نور النساءبرطانیہ میں Nora Baker کے نام سے مشہور ہیں۔ انہیں 1949ءمیں برطانیہ کے سب سے بڑے شہری اعزاز ”جارج کراس“ سے نوازا گیا۔

نور پہلی مسلم اور ایشیائی خاتون ہیں جن کا تانبے سے بنا مجسمہ لندن کے گورڈن سکوائر گارڈن میں لگایا گیا ہے۔ فرانس کی جانب سے بھی انہیں سب سے اعلیٰ شہری اعزاز ”کروکس ڈی گیری“ سے نوازا جاچکا ہے۔