پاناما کیس کی سماعت مکمل، سپریم کورٹ نے فیصلہ محفوظ کر لیا

پاناما کیس کی سماعت مکمل، سپریم کورٹ نے فیصلہ محفوظ کر لیا

اسلام آباد: جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے پاناما عملدرآمد کیس کی آج مسلسل پانچویں سماعت کی۔ وزیراعظم کے صاحبزادے حسین، حسن اور صاحبزادی مریم نواز کے وکیل سلمان اکرم راجا نے اور اسحاق ڈار کے وکیل نے دلائل دیئے جبکہ دیگر فریقین کے وکلا کی جانب سے عدالت میں جواب الجواب دیئے گئے۔ تاہم تمام فریقین کی جانب سے دلائل مکمل ہونے کے بعد سپریم کورٹ نے سماعت مکمل کرتے ہوئے پاناما کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا جو بعد میں سُنایا جائے گا۔


جسٹس اعجاز الاحسن نے اپنے ریمارکس میں کہا قانون کے مطابق فیصلہ کرنا ہے جبکہ جسٹس اعجاز اٖفضل نے کہا اپنے فیصلے سے پیچھے نہیں ہٹیں گے اور نا اہلی سمیت تمام پہلوؤں کا جائزہ لیکر فیصلہ جاری کریں گے۔ جسٹس عظمت سعید کا کہنا تھا  کیس میں وزیراعظم کی نااہلی کا معاملہ زیر غور لائیں گے۔

آج وزیراعظم کے بچوں کے  وکیل سلمان اکرم راجہ نے اپنے دلائل شروع کرتے ہوئے کہا گزشتہ روز کی سماعت میں نیلسن اور نیسکول کے ٹرسٹ ڈیڈ پر بات ہوئی تھی جس پر عدالت کے ریمارکس تھے کہ بادی النظر میں یہ جعلسازی کا کیس ہے اور اسی حوالے سے میں نے کل کہا تھا اسکی وضاحت ہو گی۔ جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دیئے کہ یہ تو ہم بھی دیکھ سکتے ہیں کہ دستخط کیسے مختلف ہیں جس پر سلمان اکرم راجا نے کہا کہ اکرم شیخ نے کل کہا تھا کہ غلطی سے یہ صفحات لگ گئے تھے اور یہ صرف ایک کلریکل غلطی تھی جو اکرم شیخ کے چیمبر سے ہوئی اور کسی بھی صورت میں جعلی دستاویز دینے کی نیت نہیں تھی جبکہ ماہرین نے غلطی والی دستاویزات کا جائزہ لیا جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ مسئلہ صرف فونٹ کا رہ گیا ہے جس پر سلمان اکرم راجا نے کہا کہ دوسرا معاملہ چھٹی کے روز نوٹری تصدیق کا ہے اور لندن میں بہت سے سولیسٹر ہفتہ بلکہ اتوار کو بھی کھلتے ہیں جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حسین نواز سے پوچھا گیا کہ چھٹی کے روز ملاقات ہو سکتی ہے۔ حسین نواز نے کہا تھا کہ چھٹی کے روز اپائنٹمنٹ نہیں ہو سکتی جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ عام سوال کیا جائے تو جواب مختلف ہو گا اور مخصوص سوال نہیں کیا گیا۔

سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی رپورٹ کا والیم 10 بھی منگوایا۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ دسویں جلد میں جے آئی ٹی کے خطوط کی تفصیل ہو گی اور دسویں جلد سے بہت سی چیزیں واضح ہو جائیں گی جس کے بعد جے آئی ٹی رپورٹ کا سر بمہر والیم 10 عدالت میں پیش کر دیا گیا۔ والیم 10 کی سیل عدالت میں کھول دی گئی اورعدالت نے والیم 10 کا جائزہ بھی لیا جب کہ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس میں کہا کہ خواجہ صاحب یہ والیم آپکی درخواست پر کھولا جا رہا ہے۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا دستاویزات میں متعلقہ نوٹری پبلک کی تفصیل ہے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ حسین نواز کا اکثر سولیسٹر سے رابطہ رہتا ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حسین نواز نے نہیں کیا ان دستاویزات پر کسی کے دستخط بھی نہیں اور کل عدالت کو بی وی آئی کا 16 جون کا خط موصول ہوا۔عدالت نے خواجہ حارث کو والیم 10 کی مخصوص دستاویز پڑھنے کو دی اور عدالت کی جانب سے ریمارکس دیئے گئے کہ ابھی والیم 10 کسی کو نہیں دکھائیں گے۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ 23 جون کو جے آئی ٹی نے خط لکھا جواب میں اٹارنی جنرل بی وی آئی نے خط لکھا۔ جسٹس اعجازافضل نے ریمارکس دیئے کہ کیا اس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ ریفرنس نیب کو بھجوا دیا جائے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ میرا جواب ہے کہ کیس مزید تحقیقات کا ہے۔ خطوط کو بطور شواہد پیش کیا جا سکتا ہے لیکن تسلیم نہیں کیا جا سکتا جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ شواہد کو تسلیم کرنا نہ کرنا ٹرائل کورٹ کا کام ہے جب کہ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ کل پوچھا تھا کیا قطری شواہد دینے کے لیے تیار ہے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ قطری کی جانب سے کچھ نہیں کہہ سکتا۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ کل عدالت نے کہا تھا کہ قطری نے جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونے سے انکار کیا میں نے تمام قطری خطوط کا جائزہ لیا جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کل جسٹس عظمت سعید نے پوچھا تھا کہ کیا آج قطری پیش ہونے کو تیار ہیں۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ قطری کو ویڈیو لنک کی پیشکش نہیں کی گئی۔ سال 2004 تک حسین اور حسن کو سرمایہ ان کے دادا دیتے رہے اگر بیٹا اثاثے ثابت نہ کر سکے تو ذمہ داری والدین پر نہیں آ سکتی جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ عوامی عہدہ رکھنے والوں کی آمدن اثاثوں کے مطابق نہ ہو تو کیا ہو گا۔ پبلک آفس ہولڈر نے اسمبلی میں کہا یہ ہیں وہ ذرائع جن سے فلیٹس خریدے جس کے بعد وزیراعظم نے کچھ مشکوک دستاویزات سپیکر کو دیں ہم ایک سال سے ان دستاویزات کا انتظار کر رہے ہیں۔ یہاں معاملہ عوامی عہدہ رکھنے والے کا ہے وہ اپنے عہدے کے باعث جواب دہ ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ عوامی عہدہ رکھنے والے نے قومی اسمبلی اور قوم سے خطاب کیا تھا۔ خطاب میں کہا تھا بچوں کے کاروبار کے تمام ثبوت موجود ہیں اور ہم ایک سال سے ان ثبوتوں کا انتظار کر رہے ہیں۔ رپورٹ میں مریم کے بینیفیشل مالک ہونے کا کہا گیا ہے۔

جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ مریم نواز کی کمپنیوں کا بینیفیشل مالک ہونا کیپٹن صفدر کے گوشواروں میں ظاہر نہیں ہوتا اگر عدالت اس نتیجے پر پہنچی کہ گوشواروں میں ملکیت کا ذکر نہیں تو عوامی نمائندگی ایکٹ لاگو ہو گا جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ عوامی نمائندگی ایکٹ لاگو کرنے کے لیے باقاعدہ قانونی عمل درکارہو گا۔ جے آئی ٹی کو ایرول جارج نے اپنے جواب میں 2012 جون کی صورتحال کی تصدیق کی اور ایرول جارج کے بیان میں کوئی نئی بات نہیں۔ وزیراعظم کے بچوں کے وکیل سلمان اکرم راجا نے اپنے دلائل مکمل کر لیے۔

وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے وکیل طارق حسن کے دلائل دیتے ہوئے کہا اپنے جواب میں عدالتی تحفظات دور کرنے کی کوشش کی ہے اور عدالت میں دو جواب داخل کرائے ہیں۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دئیے کہ جے آئی ٹی نے آپ کے اثاثوں میں اضافے کا کہا لیکن اسحاق ڈار اس کا جواب نہ دے سکے۔ اس سے ہو سکتا ہے اسحاق ڈار کے خلاف کاروائی شروع ہو جائے۔ جسٹس اعجاز افضل کا کہنا تھا کہ حدیبیہ پیپر ملز کیس میں اسحاق ڈار شامل تھے اگر حدیبیہ پیپر ملز کیس کے خارج ہونے کو تسلیم بھی کر لیں تو بھی اسحاق ڈار کے خلاف کافی مواد موجود ہے۔

اسحاق ڈار کے وکیل طارق حسن کا کہنا ہے کہ عدالت میں دو جواب داخل کرائے ہیں جن میں عدالتی تحفظات دور کرنے کی کوشش کی ہے جس پر جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ قانون کے دائرے میں رہ کر لہروں کے خلاف بھی تیرنا ہو تو تیر لیں گے۔

سماعت کے دوران طارق حسن کی جانب سے اسحاق ڈار کا 34 سالہ ریکارڈ سر بمہر پیش کیا گیا جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ یہ ڈبہ اب سارا دن ٹی وی کی زینت بنے گا جس پر طارق حسن نے کہا کہ سنا ہے جے آئی ٹی نے بھی ایسے ہی ڈبے پیش کیے۔

جسٹس اعجاز افضل نے اپنے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی نے اثاثوں میں اضافے کا کہا اور اسحاق ڈار اس کا جواب نہ دے سکے اس سے ہو سکتا ہے اسحاق ڈار کے خلاف کارروائی شروع ہو جائے۔ حدیبیہ پیپر ملز کیس میں آپ شامل تھے اور حدیبیہ پیپر ملز کیس کے خارج ہونے کو تسلیم کر لیں تو بھی اسحاق ڈار کے خلاف کافی مواد ہے۔ جسٹس عظمت سعید نے اپنے ریمارکس دیئے کہ آج اسحاق ڈار کا ٹیکس ریکارڈ موجود ہے جس پر اسحاق ڈارکے وکیل نے کہا کہ جے آئی ٹی نے اپنے طور پر مکمل بد نیتی ظاہر کی۔ تین ذرائع سے یہ ریکارڈ جمع کیا جس پر جسٹس اعجاز احسن نے ریمارکس دیئے کہ اثاثے پانچ سال میں 9 ملین سے بڑھ کر835 ملین ہو گئے۔ بتائیں کہ شیخ النیہان نے کن شرائط پر اسحاق ڈار سے معاہدہ کیا جس پر طارق حسن نے اپنے دلائل میں کہا کہ اسحاق ڈار صرف سیاستدان نہیں پروفیشنل اکاؤنٹنٹ بھی ہیں اگر پاکستان میں دو لاکھ کماؤں اور باہر جا کر کمائی دس گنا بڑھ جائے تو کیا یہ غلط ہے۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ اگر آپ صرف دو لاکھ سالانہ کماتے ہیں تو پھر پیشہ چھوڑ دیں جس پر طارق حسن نے کہا کہ سیاست میں آنے کے بعد کئی بار اسحاق ڈار کے اکاؤنٹس کی پڑتال کی گئی۔ آج تک اسحاق ڈار کے خلاف کچھ نہیں نکلا۔ طارق حسن نے اسحاق ڈار کے ٹیکس جمع کرانے پر لمبے دلائل شروع کیے تو جسٹس اعجاز افضل نے روکتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ چاہتے ہیں کہ یہ سماعت ہمیشہ ہی چلتی رہے۔

طارق حسن نے کہا کہ ریکارڈ کے بغیر جے آئی ٹی کیسے اسحاق ڈار کے خلاف کسی نتیجے پر پہنچ سکتی ہے بلاوجہ کے احتساب میں گھسیٹنا قبول نہیں۔ جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ اگر یہ ڈرامائی کہانی ہے تو کیا آپ چاہتے ہیں کہ کہانی ڈرامے کی طرح ختم ہو جو تحریری جواب آپ نے دیا ہے یقین رکھیں اس کا جائزہ لیا جائے گا۔ تحریری جواب سے ہٹ کر دلائل ہیں تو دیں ہم سنیں گے۔

طارق حسن نے مزید کہا کہ جے آئی ٹی میں بطور گواہ گیا تھا لیکن یہاں لگتا ہے ملزم ہوں جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی نے جو کیا وہ اسحاق ڈار کے اعترافی بیان کے باعث کیا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی نے نیب اور ایف آئی اے سے ملنے والی دستاویزات کا جائزہ لینا تھا۔ جے آئی ٹی میں آپ نے اپنی کمائی اور براک ہولڈنگ کی تفصیلات فراہم نہیں کیں۔ سمجھ نہیں آتا کہ اسحاق ڈار نے کس بات کا استحقاق مانگا۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ نے اپنے اوپر لگنے والے الزامات کا تحریری جواب دیا۔ تسلی رکھیں ہر وکیل کے ہر جواب کی ہر سطر پڑھیں گے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے اپنے ریمارکس دیئے کہ اسحاق ڈار کا بیٹا بیرون ملک کمپنی سے باپ کو پیسے بھیجتا رہا جو ٹیکس بچانے کے لیے تھا۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ ماضی کی طرح شریف خاندان کے خلاف دوبارہ گواہ بننا چاہتے ہیں؟۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ اسحاق ڈار کے اثاثوں میں 800 ملین کا اضافہ ہوا اور اسحاق ڈار نے بیٹے کو کمپنی ہل میٹل کے فنڈز دئیے اور بیٹے نے وہی رقم باپ کو تحفے میں بھیج دی۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ مسٹر طارق حسن کم از کم آپ تو اپنے موکل سے انصاف کر لیں۔ آپ انصاف کر لیں اور ہمیں بھی اسحاق ڈارسے انصاف کرنے دیں۔

جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ چاہتے ہیں کہ ہم یہ کہہ دیں کہ آپ کے دلائل سن کر اطمینان ہوا۔ دونوں فریقین سن لیں اس کیس میں ہم قانون سے باہر نہیں جائیں گے سب کے بنیادی حقوق کا احساس ہے۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ فریقین ایک دوسرے کو بُرا بھلا کہتے رہتے ہیں ہمیں کچھ نہ کہیں کیس ختم ہو جائے گا آپ چلے جائیں گے مگر ہمارا کام جاری رہے گا جبکہ بہت زیادہ تفصیل دینا بھی کیس کو برباد کر دیتا ہے۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ اس وقت تک کیس سنیں گے جب تک کہ آپ تھک نہ جائیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جس چیز کی آئین اور قانون نے اجازت نہیں دی وہ نہیں کریں گے۔ انصاف کے تقاضے پورے کرنا تھے اسی لیے کیس کو روزانہ سُنا۔ اس کے بعد اسحاق ڈار کے وکیل طارق حسن نے اپنے دلائل مکمل کیے۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل کا کہنا ہے کہ وفاق کا موقف ہے کہ عدالت نے 5 ماہ کیس سنا اور ہر فریق کو مناسب موقع دیا گیا جبکہ تحقیقات میں نیا ریکارڈ بھی سامنے آیا۔ مجھے یقین ہے کہ عدالت فریقین کے حقوق کا خیال رکھے گی۔ جے آئی ٹی کی فائنڈنگز عدالت پر لازم نہیں۔ عدالت نے عدالت نے اٹارنی جنرل کو آج ہی اپنا تحریری جواب جمع کروانے کی ہدایت کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ عدالت شفافیت اور قانون کی حکمرانی کو برقرار رکھے۔

سماعت کے دوران نیب کے وکیل چوہدری اکبر تارڑ نے اپنے دلائل میں کہا کہ نیب نے حدیبیہ کیس کھولنے کا فیصلہ کر لیا ہے اور ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل دائر کریں گے جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ آپ نے سوچ لیا تو یہ سوچ تحریری شکل میں کب آئے گی جس پر چوہدری اکبر تارڑ نے دلائل مکمل کرتے ہوئے کہا کہ ایک ہفتے میں سپریم کورٹ میں اپیل دائر کریں گے۔

تحریک انصاف کے وکیل نعیم بخاری نے جواب الجواب میں کہا کہ ثابت ہو گیا وزیراعظم صادق اور امین نہیں رہے کیونکہ ایف زیڈ ای کمپنی کو وزیراعظم نے ظاہر نہیں کیا۔ ایف زیڈ ای کمپنی کا چیئرمین ہونا اور تنخواہ وصولی ظاہر نہیں کی گئی جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ ان کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم نے تنخواہ نہیں لی جس پر جسٹس عظمت سعید نے اپنے ریمارکس دیئے کہ تنخواہ لینے اور نہ لینے کے اثرات علیحدہ، علیحدہ ہوں گے۔

جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ یہ حقیقت ہے کہ اگر اثاثے ظاہر نہ کیے گئے تو بددیانتی کہلائے گی۔ سوال یہ ہے کہ یہ ہمارا دائرہ اختیار ہو گا یا الیکشن کمیشن کا ہو گا۔ نعیم بخاری نے کہا کہ تقریر میں وزیر اعظم نے گلف سٹیل مل 33 ملین درہم کی فروخت کرنے کا کہا جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ بی سی سی آئی رقم شامل کرنے پر 33 ملین کی ہی بنتی ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ آپ کہہ رہے ہیں کہ بقایا جات ادائیگی کے بعد سرمایہ کاری کے لیے کچھ نہیں بچا۔ نعیم بخاری نے کہا کہ شہباز شریف نے 1980 کے سیل معاہدے کو تسلیم نہیں کیا۔ سعودی عزیزیہ مل 63 ملین میں فروخت کرنے کا کہا گیا اور اس حوالے سے بھی 20 ملین کم ہیں۔ وزیراعظم نے سعودیہ مل کی فروخت سے لندن فلیٹس خریداری کا کہا جبکہ حسن نے 2001 میں کاروبار شروع کیا۔ عزیزیہ 2005 میں فروخت ہوئی اور وزیراعظم کو ہل میٹل اور حسین نواز سے تحائف آ رہے ہیں۔ 1980 میں شہباز شریف نے خود کو کاروبار سے الگ کیا اور طارق شفیع شہباز شریف کے نمائندے بنے رہے۔ ان کا مزید کہنا تھا جدہ مل کی 20 ملین رقم واجب الادا تھی اور گلف سٹیل مل کی فروخت بارے بھی غلط بیانی کی گئی جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کیا کسی پبلک آفس ہولڈر کے ملازمت کرنے پر پابندی ہے جس پر نعیم بخاری نے کہا جی بالکل ہے پبلک آفس ہولڈر کی ملازمت مفادات کا ٹکراوٴ ہے۔

اس موقع پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ امریکا سے بھی وزیر اعظم کو شیخ سعید نامی شخص سے 10 ملین ملے۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ آئین میں پابندی ججز کی دوسری ملازمت کے لیے ہے کسی دوسرے آفس ہولڈر کے لیے نہیں۔ جسٹس اعجاز افضل نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل سے استفسار کیا کہ کیا وزیراعظم کی کسی دوسری ملازمت پر پابندی ہے جس پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ آئین میں وزیر اعظم کی کسی دوسری ملازمت بارے کچھ نہیں ہے۔

جسٹس اعجاز افضل نے استفسار کیا کہ سوال یہ ہے جو چیزیں درخواست میں نہیں کیا ہمیں ان پر جانا چاہیے جس پر نعیم بخاری نے کہا کہ سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی کو تمام معاملات کی جانچ کا کہا ہے۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ نئی چیزیں کیس میں شامل کر کے فریقین کو سرپرائز دیا جا سکتا ہے اور یہ بات تسلیم کرتے ہیں کہ ثبوت کا بار شریف خاندان پر ہے۔ نعیم بخاری نے کہا کہ فیملی سیٹلمنٹ کے وقت 93ء سے زیر استعمال فلیٹس زیر بحث نہیں آئے اور قطری خطوط نکال دیں تو 1993-96 سے لندن فلیٹس نواز شریف کی ملکیت بنتے ہیں۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ قطری سپریڈ شیٹ تو نہ ادھر کی ہے نہ ادھر کی جس پر نعیم بخاری نے کہا کہ بہترین وضاحت یہ ہوتی کہ فلیٹس میاں شریف نے خریدے۔ جسٹس اعجاز افضل نے استفسار کیا کہ اگر ہم مان لیں کہ فلیٹس کی مالک مریم ہیں اور مریم نواز شریف کی زیر کفالت ہیں تو اثاثے ظاہر کرنے پر ہی وزیر اعظم کی نااہلی بارے فیصلہ دیا جا سکتا ہے اگر زیر کفالت ثابت نہ ہو تو صرف مریم کا فلیٹس کا مالک ہونا کافی نہیں۔

جسٹس اعجاز افضل نے اپنے ریمارکس میں کہا جے آئی ٹی بنی تو سب نے کہا کہ جے آئی ٹی کا کام آزادانہ ہو گا۔ جے آئی ٹی نے اپنی بساط سے بڑھ کر کام کیا اگر ہم نے ٹرائل سے متعلق فیصلہ دیا تو یہ فیئر ٹرائل ہو گا جب کہ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی نے جن حالات میں کام کیا قابل تحسین ہے۔

جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ  مریم نواز کو بینیفشل مالک تسلیم کر بھی لیں تو زیر کفالت کا معاملہ آئے گا کیونکہ درخواست میں آپ نے مریم نواز کے زیر کفالت ہونے کا کہا تھا۔ مریم نواز کے زیر کفالت ہونے کے واضع شواہد نہیں ملے جس پر نعیم بخاری نے دلائل مکمل کرتے ہوئے کہا کہ میرے خیال میں وزیر اعظم عہدے پر رہنے کے قابل نہیں رہے۔

نعیم بخاری کے دلائل مکمل ہونے کے بعد شیخ رشید نے دلائل دیتے ہوئے کہا جے آئی ٹی کے سپر سکس نے ثابت کر دیا کہ پاکستان رہنے کے قابل ملک ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے پر مٹھائیاں بانٹیں گئیں لگتا ہے میری طرح ان کی انگریزی بھی کمزور ہے۔ انہوں نے اپنے دلائل میں مزید کہا وزیراعظم کا کل کا خطاب توہین عدالت ہے اور جے آئی ٹی کے بارے میں الفاظ استعمال کر کے عدالت کی توہین کی گئی۔ صادق اور امین گلوبل تصور ہوتا ہے یہ نہیں ہو سکتا کہ لاہور میں صادق اور اسلام آباد میں کرپٹ ہوں۔ شریف فیملی پاناما سے اقامہ تک پہنچ گئی۔ وزیراعظم نے تو دبئی والوں کو بھی چونا لگایا۔ شیخ رشید نے کہا نواز شریف نے دبئی والوں کو نہیں بتایا کہ میں پاکستانی وزیراعظم ہوں جبکہ میں نمازوں میں دعا مانگتا ھوں یا اللہ شیخ عظمت سعید بیمار نہ ہو جائیں۔

چوتھی سماعت کی کارروائی کی تفصیل

پاناما عملدرآمد کیس میں چوتھی سماعت کے دوران وزیراعظم کے بچوں کے وکیل سلمان اکرم راجہ نے لندن فلیٹس کی ملکیت سے متعلق نئی دستاویزات عدالت میں پیش کیں تھیں جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ تمام دستاویزات پیش کرنے سے پہلے میڈیا میں زیر بحث رہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ایک خط قطری شہزادے کا ہے جب کہ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس میں کہا کہ آپ نے میڈیا پر اپنا کیس چلایا جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ میڈیا پر دستاویز میری طرف سے جاری نہیں کی گئی۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ باہر میڈیا کا ڈائس لگا ہے وہاں دلائل بھی دے آئیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ دونوں دستاویزات عدالت میں ہی کھولیں گے تمام دستاویزات لیگل ٹیم نے ہی میڈیا کو دی ہوں گی۔

جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے تھے کہ جے آئی ٹی نے متعلقہ حکام سے تصدیق کروانا تھی۔ مریم کے وکیل نے عدالت میں منروا کی دستاویزات سے لاتعلقی ظاہر کی جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ جے آئی ٹی نے یو اے ای کے خط پر نتائج اخذ کیے اور یو اے ای کے خط پر حسین نواز سے کوئی سوال نہیں پوچھا گیا تھا جب کہ حسین نواز کی تصدیق شدہ دستاویزات کو بھی نہیں مانا گیا۔ جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ آپ نے جو دستاویزات دیں جے آئی ٹی نے ان کی محکمہ انصاف سے تصدیق کرائی۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ دبئی کی دستاویزات بارے حسین نواز سے پوچھا جانا چاہیے تھا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس میں کہا کہ متحدہ عرب امارات سے بھی حسین نواز کی دستاویزات کی تصدیق مانگی گئی تھی۔

سماعت کے دوران سلمان اکرم راجہ نے یو اے ای کی وزارت انصاف کا خط پڑھ کر سنایا اور کہا تھا کہ یو اے ای حکام نے گلف سٹیل ملز کے معاہدے کا ریکارڈ نہ ہونے کا جواب دیا اور 12 ملین درہم کی ٹرانزیکشنز کی بھی تردید کی گئی۔ خط میں کہا گیا کہ مشینری کی منتقلی کا کسٹم ریکارڈ بھی موجود نہیں جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس میں کہا کہ یو اے ای حکام نے کہا تھا یہ مہر ہماری ہے ہی نہیں۔

وکیل سلمان اکرم راجہ نے اپنے دلائل میں مزید کہا تھا کہ کچھ غلط فہمی ہوئی ہے جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حسین نواز اور طارق شفیع سے پوچھا تو انہوں نے کہا ہم نے نوٹری نہیں کرایا اور سب نے کہا یہ نوٹری مہر کو نہیں جانتے۔ اس کا مطلب یہ دستاویزات غلط ہیں اور یہ بھی پوچھا گیا تھا کہ حسین نواز نے نوٹری پبلک سے تصدیق کروائی۔ حسین نواز نے جے آئی ٹی کو بتایا تھا کہ وہ دبئی نہیں گئے پھر کس نے نوٹری پبلک سے تصدیق کروائی اس سے تو یہ دستاویزات جعلی لگتی ہیں جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ حسین نواز کی جگہ کوئی اور نوٹری تصدیق کے لیے گیا تھا۔ جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ہم آپ سے پوچھ رہے ہیں اپنا موقف ہمیں بتا دیں جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ یو اے ای حکام سے سنگین غلطی ہوئی ہو گی۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ آپ کو چاہیے تھا تمام ریکارڈ جے آئی ٹی کو فراہم کرتے اب آپ نئی دستاویزات لے آئے ہیں اب دیکھتے ہیں کہ ان کے کیس پر اثرات ہوں گے یا نہیں۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے تھے کہ 12 مئی 1988 اور 30 مئی 2016 کے دونوں نوٹری پبلک کو دبئی حکام نے جعلی قرار دیا۔ دبئی حکام نے دبئی سے اسکریپ جدہ جانے کی تردید کی جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ یہ سکریپ نہیں مشینری تھی جے آئی ٹی نے غلط سوال کیے جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ اگر دبئی میں اندراج نہیں ہوتا تو دبئی کے محکمہ کسٹم کی کیا ضرورت ہے جس پر سلمان اکرم راجا نے کہا کہ ایک ریاست سے دوسری ریاست سامان لے جانے کا اندراج نہیں ہوتا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کیا مشینری کی ترسیل کی دستاویزات مصدقہ ہے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ عدالت مہلت دے تو مصدقہ دستاویز بھی دے سکتا ہوں۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے تھے کہ آپ کی دی گئی دستاویز میں میٹریل کی تفصیل شامل نہیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ یہ کیس کب سے شروع ہوا ہے آدھا حصہ بتاتے ہیں جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جب سوال اٹھایا جاتا ہے تو دستاویز لے آتے ہیں۔ سلمان اکرم نے کہا کہ مشینری کی منتقلی پر پہلے کسی نے شک و شبہ کا اظہار نہیں کیا تھا جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ خلا کو وقت کے ساتھ پر کیا گیا۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ ان دستاویز کو جے آئی ٹی رپورٹ کے جواب میں لایا گیا یہ نقطہ ہم نے نوٹ کر لیا۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ آپ ٹائی ٹینک کی دستاویز لے آئیں تاکہ ہم مان لیں۔ نجی دستاویز میں تو یہ بھی لکھا جا سکتا ہے کہ سامان ٹائی ٹینک میں گیا۔ کوئی مصدقہ دستاویز لائیں اور آپ کو لکھ کر دے دیتا ہوں کہ نتائج کی کوئی حیثیت نہیں اور حیثیت ہے تو ان کے میٹیریل کی ہے۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس میں مزید کہا تھا کہ جے آئی ٹی کے نتائج پر حملے نہ کریں اور ان کی دستاویزات کا جواب دیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ عزیزیہ اسٹیل مل کا بینک ریکارڈ بھی موجود ہے جس پرعدالت کی جانب سے ریمارکس دیئے گئے کہ کیا فروخت کے وقت عزیزیہ پر کوئی بقایا جات تھے جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ جو بقایا جات تھے وہ ادا کر دیئے گئے۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ دستاویزات کے مطابق 21 ملین ریال عزیزیہ کی فروخت کے وقت بقایا جات تھے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ یہ دستاویزات ذرائع سے حاصل کی گئی تھیں۔ جے آئی ٹی نے قرار دیا کہ عزیزیہ سٹیل مل 63 ملین ریال کی بجائے 42 ملین ریال میں فروخت ہوئی۔ 63 ملین ریال کی رقم عزیزیہ کے اکاؤنٹ میں آئی جس کا بینک ریکارڈ موجود ہے جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ یہ بینک ریکارڈ لے آئے ہیں تو دوسرا بھی لے آئیں جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ نقطہ یہ ہے کہ 63 ملین میرے اکاؤنٹ میں آئے اس سے آگے چلنا ہے جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ یہ اتنا آسان نہیں ہے۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کیا عزیزیہ کے واجبات کسی دوسرے نے ادا کئے جس پر وکیل نے کہا کہ معلوم کر کے بتا سکتا ہوں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حسین، عباس اور شہباز شریف کی بیٹی عزیزیہ کے حصہ دار تھے۔ جسٹس عظمت سعید نے اپنے ریمارکس میں کہا تھا کہ کیس کی تاریخ یہ ہے کہ خفیہ جگہوں سے ادائیگیاں ہوتی ہیں جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ جے آئی ٹی کو چاہئے تھا کہ ان پر سوالات کرتی۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ کیا اخبار میں اشتہار دے کر سوال پوچھتے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ تین حصہ دار تھے صرف حسین نواز نے عزیزیہ فروخت کی۔ کیا حسین نواز پہلے دونوں حصہ داروں کے شیئرز خرید چکے تھے۔ حسین نواز نے پاور آف اٹارنی آج تک جمع نہیں کرائی جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ میرا یہ کہنا ہے کہ یہ ایک خاندانی معاملہ تھا جس کا تحریری جواب موجود نہیں جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ پہلے تو کہا گیا تھا پاور آف اٹارنی موجود ہے۔ دستاویزات سے ثابت کریں کہ باقی لوگوں کو حصہ دیا گیا جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ جے آئی ٹی نے یہ سوال نہیں پوچھا تھا۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی میں حسین نواز نے پاور آف اٹارنی دینے کی بات کی تھی۔ کیا پاور آف اٹارنی ہے بھی یا نہیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ ابھی تک سامنے نہیں آیا۔ عزیزیہ کے دو حصہ دار رابعہ اور عباس شریف عدالت آ سکتے ہیں۔ دوسرے دو شراکت داروں نے عزیزیہ کی فروخت کو چیلنج نہیں کیا۔ الزام یہ ہے کہ 1993 ء میں حسن، حسین لندن فلیٹ نہیں خرید سکتے تھے جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ 1993 سے آج تک لندن فلیٹس میں وزیر اعظم کے بچے رہائش پذیر ہیں اس وقت تک ہم آمدن کا ذریعہ اور منی ٹریل نہیں ڈھونڈ سکے۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے تھے کہ لندن فلیٹس نیلسن اور نیسکول کے ہیں اس پر کوئی جھگڑا نہیں۔ نیلسن، نیسکول پہلے بئیریر سرٹیفکیٹ پھر ملکیت میں تبدیل ہوئے۔ موزیک فونسکا کے ریکارڈ پر ٹرسٹ ڈیڈ موجود نہیں ہے۔ موزیک فونسکا کے مطابق مریم نواز فلیٹس کی مالک ہیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ الزام مریم نواز کے مالک ہونے کا ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ یہ الزام نہیں دستاویز کے مطابق حقیقت ہے کیونکہ موزیک فونسکا کے مطابق مریم فلیٹس کی مالک ہیں۔ سلمان اکرم نے کہا کہ ان کا کہنا ہے مریم مالک ہیں اور ہمارا کہنا ہے حسین مالک ہے فرق تو نہیں جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ بہت فرق ہے اگر مریم مالک ہے تو پھر ہم فنڈز کو بھی دیکھیں گے۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ وہ تو حسین کے معاملہ میں بھی فنڈز دیکھے جائیں گے جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ 93 میں بچوں کی عمریں دیکھیں تو معلوم ہوتا ہے کہ یہ فلیٹ خرید نہیں سکتے۔ الزام ہے کہ فلیٹ وزیراعظم نے خریدے اور درخواست گزار کہتے ہیں کہ وزیر عظم فنڈز بتائیں۔

جسٹس عظمت سعید نے اپنے ریمارکس دیئے کہ پوچھتے ہیں ہم پر الزام کیا ہے تو کہہ دیتے ہیں کہ (نائین اے فائیو) کا الزام ہے جس کا مطلب ہوتا ہے کہ کرپشن اور کرپٹ پریکٹس جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ الزام یہ ہے کہ بچے بے نامی دار ہیں۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے تھے کہ اگر نواز شریف کے بچے ثابت کر دیں انھوں نے اپنی کمائی سے لندن فلیٹس خریدے تو وزیراعظم بچ جائیں گے اگر عدالت کو مطمئن نہ کر سکے تو وزیر اعظم کو نتائج بھگتنا پڑیں گے۔ نواز شریف کو اپنے اور بچوں کے اثاثے ظاہر آمدن کے مطابق ہونے سے متعلق ثابت کرنا پڑے گا۔

دلائل کے دوران سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ مریم، حسن اور حسین نے کوئی غلط کام نہیں کیا صرف اپنے شیئرز وصول کیے۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ ٹھیک ہے نوٹ کر لیا کہ فلیٹ حسین نواز نے حاصل کیے۔ الزام ہے کہ مریم وزیر اعظم کی کفالت میں ہیں اور نعیم بخاری کا کہنا ہے کہ مریم عدالت سے سچ نہیں بولیں گی تو اس کے نتائج ہوں گے۔ جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ مریم پر جعلی دستاویز عدالت میں دینے کا بھی الزام ہے۔

سلمان اکرم نے کہا کہ عدالت سوالیہ نشان لگا رہی ہے تو مجھے جواب کا موقع دیا جائے جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ آپ ایک گھنٹے سے دلائل دے رہے ہیں لیکن کوئی نئی بات نہیں کی۔ سلمان اکرم راجہ نے اپنے دلائل میں کہا کہ عزیزیہ اسٹیل ملز بنی اور کام شروع کر دیا جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ اور نقصان بھی اٹھانا شروع کر دیا۔

جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ اگر آپ کے خلاف الزام نہیں تو اپنی توانائی کیوں خرچ کر رہے ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ الزام غلط اور جعلی دستاویزات دینے کے ہیں۔ ٹھیک ہے مان لیا رقم گلف اسٹیل ملز سے گئی لیکن کیسے ہم ڈیڑھ سال سے اس بارے میں پوچھ رہے ہیں لیکن کوئی جواب نہیں آ رہا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ فنڈز کے سوالوں کا ان کے پاس کوئی جواب نہیں جبکہ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ نہ ادھر ہے نہ ادھر ہے کیا کریں، حسن، حسین اور مریم کے اکاوٴنٹ میں رقم آئی تو ان کو معلوم ہو گا کدھر سے آئی۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ قطری خط میں فلیگ شپ اور عزیزیہ سٹیل مل کا ذکر نہیں۔

سماعت کے دوران عدالت نے حمد بن جاسم اور بی وی آئی کی دستاویز کھولیں جن میں جے آئی ٹی کو بھیجے گئے دو لیٹرز شامل تھے۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی اپنا کام مکمل کر چکی ہے اس لئے دستاویزات رجسٹرار کو بھیج دی گئیں ہم نے کھلی عدالت میں دستاویز کا جائزہ لیا اور دونوں فریقین اس ریکارڈ کو حاصل کر سکتے ہیں۔

سلمان اکرم نے اپنے دلائل میں کہا جے آئی ٹی نے خود سے نتیجہ نکال لیا کہ حمد بن جاسم کے انٹرویو کی ضرورت نہیں۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ عدالت کہہ چکی ہے فیصلہ دستاویز پر ہونا ہے اور آپ دلائل دے رہے ہیں کہ کیس مزید تحقیقات کا بن چکا ہے ۔ سلمان اکرم نے کہا کہ میں صرف یہ کہہ رہا ہوں کہ مکمل انکوائری ہونی چاہیے دادا محمد شریف نے اپنی زندگی میں حسن اور حسین کے لیے رقم کا انتظام کیا جس پر جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ مزید تحقیقات کا کہہ کر آپ نے نئی بات کر دی۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ میں نے موکل سے پوچھا ہے انکا کہنا ہے کہ 63 ملین ریال ٹوٹل ہے جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ آپ کے موکل نے جے آئی ٹی کو کہا 21 ملین ریال کی ادائیگی میری ذمہ داری تھی۔

سلمان اکرم نے کہا کہ دونوں فیملیز نے 63 ملین ریال استعمال کرنے کی اجازت حسین نواز کو دی۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ سب باتیں زبانی ہی ہیں۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ یہ تو خاندان کے اندر کی بات ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جے آئی ٹی کو دستاویز نہیں دیں اور ہمیں نہیں دکھائی پھر کس کو دکھائیں گے۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ کسی متعلقہ فورم پر دستاویز دینا چاہتے ہیں۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ یہ بات عدالت پر چھوڑتا ہوں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ ہل میٹل سے کس نے فائدہ اٹھایا۔ سماعت کے دوران سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ کسی غلط کام کا ثبوت نہیں ہے جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کسی صحیح کام کا بھی ثبوت نہیں ہے۔ سلمان اکرم نے کہا کہ کسی کا بے نامی دار ہونا بھی ثابت نہیں جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ جن کی جائیداد ہوتی ہے انکو وضاحت دینا پڑتی ہے یہ دیکھنا ہے کہ کیس بنتا ہے کہ نہیں۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ ہزاروں پاکستانی ملک سے باہر کام کر رہے ہیں جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ وہ ہزاروں پاکستانی وزیراعظم نہیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ آپ ہم سے کہہ رہے ہیں کہ معاملہ احتساب عدالت کو بھیج دیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ میں صرف انکوائری کا کہہ رہا ہوں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے تھے کہ قانون کے مطابق وضاحت نہ آئے تو سمجھا جائے گا وضاحت نہیں۔ سلمان اکرم نے کہا کہ ہمارا موقف ہے کہ 40 سال گزر گئے اب کوئی ثابت کرے کہ کچھ غلط ہوا۔ حسین نواز نے منروا کمپنی سے رابطہ ارینہ کمپنی کے ذریعہ کیا۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ اس موقع پر 2006 سے بینیفشل آؤنر ثابت کرنے کی ضرورت نہیں۔ مریم کے بینیفشل مالک ہونے کی دستاویز موجود ہے۔ نیب کا سیکشن 14 اے بھی پڑھ لیں کیا قطری خاندان سے تعلق قابل قبول ہے کیونکہ آفیشل کمپنی کہہ رہی تھی کہ مریم نواز مالک ہیں۔ آپ کہہ رہے ہیں کہ سرکاری دستاویزات چھوڑ کر نجی کمپنی کی دستاویز تسلیم کر لیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ عدالت اجازت دیں کہ میں اس کا جواب دوں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ چاہتے ہیں کہ نجی کمپنی جو آپ سے پیسے لیتی ہے اس کا موقف تسلیم کر لیں۔ کیا آپ چاہتے ہیں کہ ایم ایل اے کی دستاویز کو مسترد کر دیں۔ نجی کمپنی حسین نواز کے لیے کچھ بھی کہہ سکتی ہے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ جے پی سی اے نے تسلیم کیا کہ حسین نواز مالک ہیں اور مریم ٹرسٹی اور جے پی سی اے نے تحریر کیا کہ مریم سے انکی ملاقات نہیں ہوئی۔

سلمان اکرم نے کہا کہ دبئی میں نوٹری کی تصدیق کروانے والے مسٹر وقار یہاں موجود ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ وقار بیان دینا چاہتے ہیں اور حسین انکا نام بتانا نہیں چاہتے۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ حکام سے غلطی ہوئی ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ آپ کی بات سے لگتا ہے کہ دبئی حکومت بہت غلطیاں کرتی ہے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ بی وی آئی نے 2012 میں کمپنیوں کی تفصیلات چند گھنٹے میں طلب کیں۔ ایک خبر کے مطابق ان معلومات میں بہت سی غلطیاں ہوئیں۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ منروا ون مین کمپنی ہے جو صرف سروس دیتی ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جے پی سی اے چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ کمپنی ہے وہ آپکو سروس مہیا کرے گی۔ سلمان اکرم نے کہا کہ فیصل ٹوانہ حسین نواز کے نمائندہ کے طور پر ان کمپنیوں سے ڈیل کرتے ہیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ منروا کیساتھ جو معاہدہ ہوا وہ دیکھائیں۔

سلمان اکرم نے کہا کہ منروا کیساتھ ہونے والا معاہدہ ابھی موجود نہیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ عدالت میں پہلی ٹرسٹ ڈیڈ کوکمبر کی دی گئی لیکن میڑیل نیلسن اور نیسکول کا لگایا گیا۔ جے آئی ٹی نے یہ دستاویز تصدیق کے لیے بھیجیں۔ انھوں نے کہا کہ یہ فونٹ 2007 میں آیا اور ٹرسٹ ڈیڈ 2006 میں تیار ہوئی۔ فرانزک رپورٹ میں کہا گیا دونوں کمپنیوں کے دستخط والا صفحہ ایک ہے۔ بادی النظر میں وہ کہہ رہے ہیں کہ یہ دستاویزات غلط ہیں اور دونوں صفحات پرغلطی بھی ایک جیسی ہے۔

عدالت نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل رانا وقار کو روسٹرم پر طلب کیا تھا اور استفسار کیا کہ رانا صاحب بتائیں اگر سپریم کورٹ میں غلط دستاویزات دی جائیں تو کیا ہوتا ہے جس پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ غلط دستاویزات پر مقدمہ درج ہوتا ہے اس جرم کی سزا سات سال قید ہو سکتی ہے۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ عدالت میں غلط دستاویزات جمع ہونا کیسے ہو گیا ہم تو سوچ بھی نہیں سکتے یہ آپ لوگوں نے کیا کر دیا۔ چھٹی کے دن تو برطانیہ میں کوئی فون بھی نہیں اٹھاتا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے اپنے ریمارکس دیئے کہ ٹرسٹ ڈیڈ کی تصدیق ہفتہ کے روز کرائی گئی جے آئی ٹی کے رابطہ کرنے پر کمپنی نے کوئی جواب نہ دیا۔

سلمان اکرم نے کہا کہ یہ دستاویزات اکرم شیخ نے جمع کرائی ہیں اور معلوم کروں گا یہ کیسے ہوا۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ جعلی دستاویزات کے معاملہ نے میرا دل توڑ دیا اور جعلسازی پر قانون اپنا راستہ خود اختیار کرے گا۔ سلمان اکرم نے کہا کہ تکنیکی بنیاد پر کلبری فونٹ کا معاملہ درست نہیں جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ گورے تو چھینک مارتے ہیں تو رومال لگا لیتے ہیں کیا کوئی قانونی فونٹ چوری کرے گا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ٹرسٹ ڈیڈ کیساتھ بہت سے مسائل ہیں ہر شخص کے آئینی اختیارات پر ہم بہت محتاط ہیں جب کہ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ بادی النظر میں ہمارے سامنے کیس جعلی دستاویزات کا ہے فی الحال بادی النظر سے آگے نہیں جا رہے۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ مریم نواز کا آف شور کمپنیوں سے تعلق نہیں ناصر خمیس اور وقار کو جے آئی ٹی نہیں بلایا۔ ناصر خمیس اور وقار اور حسین کے درمیان ہونے والے معاملات کے گواہ ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ مسٹر وقار احمد نے ان دستاویز کو دیکھا تک نہیں۔ سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ مسٹر وقار عدالت میں موجود ہیں۔ حمد بن جاسم کی فیملی کی جانب سے تین ادائیگیاں کی گئیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ کیا یہ ادائیگیاں بھی نقد کی گئیں جس پر سلمان اکرم نے کہا کہ یہ رقوم بینک کے ذریعہ منتقل ہوئیں اور پیسہ کا سوال حمد بن جاسم سے ہو سکتا ہے۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ آپکے اکاؤنٹ میں پیسہ آیا اور آپ بتا دیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حمد بن جاسم نے خطوط میں رقم بھیجنے کا ایک لفظ نہیں لکھا۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ شہزادے کو کہا آ جائیں اس نے کہا میں نہیں آتا اور پاکستانی سفارتخانے آنے کا کہا وہ ادھر بھی نہیں مانے کیا اب ہم سارے دوحہ چلے جائیں۔

جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ خط میں حمد بن جاسم نے کہا کہ میں پاکستانی عدالتوں اور قانون کا پابند نہیں۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ لاء فرم کا اکاؤنٹ دیکھا دیں رقم کے بارے میں واضح ہو جائے گا۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ شیخ حمد اس کا جواب دے سکتا ہے جس پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ قطری شہزادے نے تو ویڈیو لنک پر جواب دینے سے بھی انکار کر دیا ہے۔ شاید اسکی تصویر اچھی نہیں آتی اس لیے ویڈیو لنک پر نہیں آئے۔ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ شہزادے نے ویڈیو لنک پر نہیں آنا پھر کیا رہ گیا جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ ارسلان افتخار کیس کے مطابق جے آئی ٹی کو قطر جانے کی ضرورت نہیں تھی ان سے صرف سوال پوچھے جا سکتے تھے جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ کیا قطری شہزادہ پاکستان آنے کو تیار ہے جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ مجھے اس بارے میں کوئی ہدایات نہیں دی گئیں۔

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ شیئرز حسین نواز کو 2006 میں دیئے گئے جس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ دبئی کمپنی کے فنڈز کہاں سے آئے تھے سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ آج اس کمپنی کا وجود نہیں۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ کیا وزیر اعظم اسکے چیئرمین ہیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ جی بالکل چیئرمین ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جبل کمپنی سے 615 ہزار پاونڈز فلیگ شپ کمپنی کو بھیجے گئے۔ آپ کہہ رہے ہیں کہ اس کمپنی کے کوئی اثاثے نہیں جس پر سلمان اکرم راجہ نے عدالت سے سوال کا جواب دینے کی مہلت مانگ لی۔ اس کے بعد سپریم کورٹ نے پاناما لیکس کیس کی سماعت ایب بار پھر کل صبح تک ملتوی کر دی گئی تھی۔

 نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں