امریکی ڈرون حملہ سری لنکن کرکٹ ٹیم پر حملے کا دہشت گردساتھیوں سمیت ہلاک

 امریکی ڈرون حملہ سری لنکن کرکٹ ٹیم پر حملے کا دہشت گردساتھیوں سمیت ہلاک

کابل:  افغانستان میں امریکی ڈرون حملے میں 2009 میں پاکستان میں سری لنکن کرکٹ ٹیم پر حملے کا دہشت گرد ہلاک ہوگیا ہے جبکہ حملے میں خودکش بمباروں کو تربیت دینے کا ماہر قاری یاسین اور 3 دیگر دہشت گرد بھی مارے گئے ہیں.


ایک غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق  امریکی ڈرون حملے نے افغانستان کے سرحدی صوبے پکتیکا میں ایک گاڑی کو نشانہ بنایا اس دوران افغانستان میں امریکی ڈرون حملے میں 2009 میں پاکستان میں سری لنکن کرکٹ ٹیم پر حملے کا ملزم ہلاک ہوگیا ہے.حملے میں خودکش بمباروں کو تربیت دینے کا ماہر قاری یاسین اور 3 دیگر دہشت گرد بھی مارے گئے ہیں۔رپورٹ کے مطابق پاکستان کے انسداد دہشت گردی ڈیپارٹمنٹ ( سی ٹی ڈی)کی جانب سے قاری یاسین کے سر کی 20 لاکھ روپے قیمت مقرر کی گئی تھی وہ 2009 میں لاہور میں سری لنکا کی کرکٹ ٹیم کی بس پر حملے میں ملوث تھا اس کی منصوبہ بندی مبینہ طور پر کالعدم لشکر جھنگوی نے کی تھی۔

دوسری طرف لشکر جھنگوی العالمی کے ترجمان علی بن سفیان نے ڈرون حملے میں قاری یاسین کے ہلاک ہونے کی تصدیق کر دی ہے ۔ رپورٹ کے مطابق قاری یاسین سری لنکن کرکٹ ٹیم پر حملے میں ملوث ہونے کے علاوہ سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف، جنرل ہیڈ کوارٹرز (جی ایچ کیو)اور لاہور میں داتا دربار میں دہشت گرد حملوں میں بھی ملوث تھا۔رپورٹ کے مطابق پکتیکا میں امریکی ڈرون حملے میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کا کمانڈر امین شاہ محسود بھی مارا گیا۔امین شاہ محسود بھی خودکش بمباروں کی تربیت کرتا تھا۔