نیب کا قومی احتساب ترمیمی ایکٹ 2022ءپر من و عن عملدرآمد کا فیصلہ

نیب کا قومی احتساب ترمیمی ایکٹ 2022ءپر من و عن عملدرآمد کا فیصلہ

اسلام آباد: قومی احتساب بیورو (نیب) نے قومی احتساب ترمیمی ایکٹ مجریہ 2022 پر من و عن عملدرآمد کا فیصلہ کر لیا ہے جس کے مطابق اب 50 کروڑ سے زیادہ کی کرپشن کے کیسز ہی لئے جائیں گے۔ 

تفصیلات کے مطابق چیئرمین نیب آفتاب سلطان کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ نیب سے متعلق نئے قانون قومی احتساب ترمیمی ایکٹ مجریہ 2022 پر من و عن عملدرآمد کیا جائے گا۔

نیب کی جانب سے جاری ہونے والے اعلامیہ میں بتایا گیا ہے کہ اب 50 کروڑ سے زیادہ کی کرپشن کے کیسزہی لئے جائیں گے اور دھوکہ دہی کیسز میں متاثرین کی تعداد کم ازکم 100 ہونے پرکیس لیا جائے گا اور احتساب عدالتوں سے واپس بھجوائے گئے کیس سیشن کورٹس میں بھیجے جائیں گے۔

اعلامیہ میں مزید بتایا گیا ہے کہ نجی افراد کو ریفرنس قانون کے مطابق کارروائی کیلئے واپس بھجوائے جائیں گے اور واپس بھیجے گئے کیسز متعلقہ دائرہ کار رکھنے والی عدالتوں کو بھجوائے جائیں گے۔

مصنف کے بارے میں