عرب کے لیلیٰ اور مجنوں کی داستان

عرب کے لیلیٰ اور مجنوں کی داستان
عرب نیوز

جدہ : لیلیٰ مجنوں کا قصہ رومانوی ادب میں عام ہے۔ نہ صرف مشرق وسطی کا بچہ بچہ محبت کی اس امر کہانی سے واقف ہے بلکہ مغرب میں بھی اس پر فلمیں بن چکی ہیں مگر شاید کئی لوگوں کو یہ نہیں معلوم کہ عرب کی سرزمین پر صرف لیلیٰ مجنوں کی محبت کی کہانی نے ہی نہیں بلکہ لازوال محبت کی کئی داستانوں نے جنم لیا جن میں سے ایک عنتر اور عبلہ کی محبت کی ادھوری کہانی بھی ہے۔


عنتر کون ہے؟

عنتر کا اصل نام عنترہ بن شداد العبسی تھاجو بہادر اور جنگجو قبیلے ”عبس“ سے تعلق رکھتے تھے۔ 525ء میں پیدا ہوئے اور  608ء میں انتقال کرگئے۔ عنتر عربوں کے مشہور اور قادر الکلام شاعر تھے۔اسلام سے پہلے شعراء نے جو لازوال قصیدے لکھے انہیں کعبۃ اللہ کی دیواروں پر لٹکایا جاتا ہے۔ ان قصائد کو ”معلقات“ کہا جاتا تھا۔ عنتر ان عرب شعراء میں سے ایک ہیں جس کا قصیدہ ”معلقات“ میں شامل کیا گیا۔

مزید پڑھیں:سعودی عرب میں لاٹری نکل آئے تو” لاس اینجلس کی پہلی پرواز “

عنتر بن شداد کی والدہ حبشی شہزادی تھیں جنہیں ایک جنگ میں کنیز بنادیا گیاتھا۔ عنتر کے والد شداد نے ان سے نکاح کرلیالیکن اس کے باوجود انہیں ایک کنیز کی حیثیت سے ہی دیکھاجاتا تھا۔ اس لیے عنترکو معاشرے میں وہ مقام حاصل نہ ہوسکاجس کے وہ حقدار تھے۔ شکل وصورت میں بھی وہ حبشیوں سے شباہت رکھتے تھے۔ 

عنتر اور عبلہ کی کہانی:

عنترکی چچا زادعبلہ ان کے قبیلے کی خوبصورت ترین خاتون تھیں جبکہ عنترشکل وصورت میں اپنے قبیلے میں سب سے کم تر تھے۔عنتر عبلہ کے حسن کے گرویدہ ہوگئے اور انہیں اپنا دل دے بیٹھے۔ عنتر کی محبت یکطرفہ نہیں تھی بلکہ عبلہ بھی ان سے بے انتہا محبت کرتی تھیں۔

 عنتر، عبلہ کا پیغام لے کر اپنے چچا کے پاس گئے مگرانہوں نے رشتہ دینے سے صاف انکار کردیاجس کے بعد خاندانی دباؤ میں آکر چچا نے عبلہ کا رشتہ دینے کے لیے ایک سو نعمانی اونٹنیاں بطور حق مہر پیش کرنے کی شرط رکھ دی۔

 نعمانی اونٹنیاں انتہائی اعلیٰ قسم کی مہنگی ترین اونٹنیاں سمجھی جاتی تھیں۔ان کی قیمت آج کے دور کی ایک سومرسیڈیز گاڑیوں کی قیمت کے برابر تھی۔

مزید پڑھیں:حوثی باغیوں کا مقابلہ کرنے والی بہادر یمنی خاتون کون ہے؟

یہ شرط صرف عنتر کو نیچا دکھانے کے لیے رکھی گئی تھی کیونکہ سب ہی جانتے تھے کہ عنتر یہ شرط پوری نہیں کرسکتے۔

عربوں کے ہاں ایک روایت مشہور تھی کہ اگر کوئی شخص کسی خاتون پر اشعار کہتا ہے تو پھر کبھی اس سے شادی نہیں کرسکتا۔ ایک طرف سو اونٹنیوں کی شرط تھی اور دوسری طرف یہ اٹل روایت جسے کسی طور توڑا نہیں جاسکتا تھا۔ پھر کیا تھا، عنتر اور عبلہ کی ادھوری محبت رہی، معاشرے کی زنجیروں نے انہیں جکڑ لیا۔

 عبلہ کی ایک خوبرو جوان سے شادی کرادی گئی اور عنتر90سال کی عمر تک عبلہ کی جدائی میں اشعار کہتے رہے۔عنتر کی لکھی ہوئی غزلیں عربی ادب کا قیمتی ورثہ ہیں جنہیں آج بھی نصابی کتابوں میں پڑھایا جاتاہے۔

عنتر کی چٹان:

 عنتر اور عبلہ زمانے کی نگاہوں سے چھپ کر ایک دوسرے سے ایک چٹان کے پاس ملا کرتے تھے۔ بعد میں اس چٹان کا نام ہی عنتر کی چٹان پڑ گیا۔ اب عنتر کے اشعار زندہ ہیں اور وہ چٹان باقی ہے جوآج بھی دونوں کی محبت کی گواہی دے رہی ہے۔

 عنتر کی چٹان قصیم ریجن میں غاف الجواء نامی علاقہ کے شمال میں واقع ہے،اس چٹان کے بارے میں چند مقامی لوگوں کو ہی معلوم تھااور انتہاپسند نظریات کے حامل افراد اسے برائی کی علامت سمجھتے تھے ،اس لیے اس چٹان کی دیکھ بھال نہ ہوسکی۔

 مزید پڑھیں:غلطی سے بی جے پی کو ووٹ ڈالنے پر نوجوان نے اپنی انگلی کاٹ ڈالی

لیکن اب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی ہدایت پرسعودی محکمہ سیاحت نے حال ہی میں ماہرین کی ایک ٹیم یہاں روانہ کی جس نے چٹان کی صفائی اور مرمت کا کام مکمل کرکے اسے سیاحوں کے لیے کھول دیا۔

چٹان پر کی جانے والی چاکنگ کو صاف کیا گیا اور اس گرد باڑ لگادی گئی ہے۔ یہاں سیاحتی گائیڈ مقرر کردیے گئے ہیں جو آنے والوں کو عنتر اور عبلہ کی محبت کی لازوال کہانی سناتے ہیں۔