ایرانی وفد حج تنازعے پر بات چیت کے لیے سعودی عرب کا دورہ کرے گا

ایرانی وفد حج تنازعے پر بات چیت کے لیے سعودی عرب کا دورہ کرے گا

تہران :ایران کا ایک سرکاری وفد اسی ہفتے سعودی دارالحکومت الریاض کا دورہ کررہا ہے جہاں وہ سعودی حکام کے ساتھ ایرانی عازمین حج کو حجاز مقدس بھیجنے کے بارے میں تبادلہ خیال کرے گا۔میڈیارپورٹس کے مطابق ایران کی وزارت خارجہ کے ترجمان بہرام قاسمی نے بدھ کے روز ایک نیوز کانفرنس میں بتایا کہ یہ دورہ سعودی عرب کی دعوت پر کیا جارہا ہے۔


دونوں ملکوں کے درمیان گذشتہ سال کے اوائل میں تہران میں سعودی سفارت خانے اور مشہد میں قونصل خانے پر مشتعل مظاہرین کے حملوں کے بعد سے تنازعہ چلا آرہا ہے اور ایران نے گذشتہ سال اپنے شہریوں کو حج کے لیے حجازِ مقدس نہیں بھیجا تھا۔ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای نے 2015ءمیں حج کے دوران میں منیٰ میں بھگدڑ کے واقعے پر سعودی عرب کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا تھا اور یہ تجویز پیش کی تھی کہ سعودی عرب کے بجائے تمام مسلم ممالک کو مشترکہ طور پر تمام حج انتظامات کا بندوبست کرنا چاہیے۔

سعودی عرب نے ایران پر جوابی الزام عاید کیا تھا کہ وہ حج کو سیاسی مقاصد کے لیے استعمال کرنے کی کوشش کر رہا ہے اور وہ اپنے اقدامات اور سرگرمیوں کے ذریعے حج کے موقع پر عازمین کے تحفظ اور سلامتی پر سمجھوتا کررہا ہے۔