او آئی سی کانفرنس

او آئی سی کانفرنس

او آئی سی کے وزرائے خارجہ اہم کانفرنس کے لیے اسلام آباد میں جمع ہیں، جہاں ایک بھاری ایجنڈا زیر غور ہے۔اسلامی تعاون تنظیم  کے سیکرٹری جنرل حسین برہم طحہ او آئی سی کی وزرائے خارجہ کونسل کے 48ویں اجلاس میں شرکت کے لیے اسلام آباد پہنچے اور او آئی سی کے سیکرٹری جنرل کی آمد پر وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات فرخ حبیب، نمائندہ خصوصی برائے مذہبی ہم آہنگی محمد طاہر اشرفی اور وزارت خارجہ کے حکام نے استقبال کیا۔ یہ بات بھی واضح کرنا ضروری ہے کہ ایسے موقع پر اس تاثر کو ختم کرنے کے لیے کہ مشترکہ اپوزیشن او آئی سی کانفرنس میں رکاوٹ ڈالنے کی کوشش کر رہی ہے، اپوزیشن نے بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ معزز مہمانوں کی آمد "ہمارے لیے خوشی اور فخر کا باعث ہے"، اور وہ منتظر ہیں۔ "معزز مہمانوں" کا استقبال کریں گے خوش آئند بات ہے کیونکہ چند روز قبل بلاول بھٹو کی زبان سے ادا ہونے والے الفاظ انکو زیادہ نہیں بھی تو سیاست سے آؤٹ کلاس تو کر ہی دیتے۔

 پاکستان کے لیے اہم لمحہ ہے کہ وہ ایک ایسے وقت میں دارالحکومت میں اس باوقار تقریب کی میزبانی کر رہاہے کہ جب یوکرین پر روسی حملے کے نتیجے میں دنیا ایک بار پھر نئے عالمی چیلنجز سے دوچار ہے دنیا بھر کی نظریں اس تنازعہ اور اس کی نئی طاقت کی حرکیات پر جمی ہوئی ہیں، یوں لگتا ہے کہ افغانستان کی صورت حال عالمی خبروں کے چکر سے باہر ہو گئی ہے جو چند ماہ پہلے دنیا کی توجہ کا مرکز تھا اب پس پشت چلا گیا ہے ،ہو سکتا ہے کہ زیادہ تر ممالک اس بے لوث کوتاہی کے متحمل ہوں لیکن پاکستان ان میں شامل نہیں ہے۔ افغانستان میں کلیدی اسٹیک ہولڈر کے طور پر، اور اس کے ساتھ ایک طویل سرحد کا اشتراک کرتے ہوئے، پاکستان دنیا کو یہ یاد دلانے سے سب سے زیادہ فائدہ اٹھاتا ہے کہ افغانستان کی صورتحال کو بین الاقوامی برادری کو حل کرنے کی ضرورت ہے۔

او آئی سی کا اجلاس کئی دہائیوں سے جاری تنازعات سے افغانستان کی بحالی میں مدد کی ضرورت کو دہرانے کے لیے ایک اہم پلیٹ فارم ہوگا۔ او آئی سی کے رکن ممالک کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی اجتماعی آواز اٹھائیں اور افغانستان کی صورتحال کو بہتر بنانے کے لیے عملی اقدامات کے ساتھ اپنے مطالبات کی حمایت کریں۔ او آئی سی  بڑی رکنیت کے باوجود جس میں پیٹرو ڈالر سے بھرے ممالک شامل ہیں، او آئی سی ایک کاغذی شیر کی طرح دکھائی دے رہا ہے جو کشمیر اور فلسطین جیسے مسلم مقاصد پر بہت کم کامیابی حاصل کرنے میں کامیاب رہا ہے۔ اس نے ان اور دیگر مسائل پر متفقہ موقف وضع کرنے یا اجتماعی موقف اختیار کرنے کے لیے جدوجہد کی ہے جس کے لیے اسلامی بلاک کو ایک ہونے کی ضرورت ہے۔

اوآئی سی اب بھی صحت، تعلیم اور غربت جیسے مسائل پر توجہ مرکوز کر کے بہت کچھ کر سکتی ہے جس سے اسکے بیشتر رکن ممالک دوچار ہیں۔ اس کے لیے تنظیم کی جانب سے اپنی طاقتوں اور کمزوریوں کا جائزہ لینے کے لیے ٹھوس کوششوں کی ضرورت ہوگی تاکہ وہ ایسی شراکتیں دے سکے جو ٹھوس نتائج میں ترجمہ کر سکیں۔ او آئی سی کو متحرک قیادت کی ضرورت ہے جو ترجیحات کا تعین کر سکے، مقاصد کو نشان زدہ کر سکے اور مقررہ وقت پر نتائج فراہم کر سکے۔ اسلام آباد کا اجلاس اس پیغام کے ساتھ آنے کا ایک اچھا موقع فراہم کرے گا کہ او آئی سی اپنی تمام تر ناکامیوں کے باوجود اب بھی دنیا کے مسلمانوں کے لیے ایک موثر پلیٹ فارم ثابت ہو سکتی ہے۔

دنیا میں اسلامو فوبیا کے مسئلے کو اٹھانے میں پاکستان کی کامیابی وضح ہے اور اس کا ثبوت اقوام متحدہ کی جانب سے اینٹی اسلامو فوبیا ڈے کے نام سے ظاہر ہوتی ہے۔ اگر مسلم اقوام صحیح طریقے سے اپنا ایجنڈا ترتیب دے سکتی ہے تو اجلاس کو ان علامات کے لیے قریب سے دیکھا جائے گا۔تنظیم اپنی کارکردگی کو بہتر بنانے اور ایک ایسا پلیٹ فارم بننے کے لیے تیار ہے جسے عالمی سطح پر مسلم کمیونٹی کی آواز کے طور پر پہچانا جائے گا۔

مصنف کے بارے میں