بھٹو کا نواسہ ہوں ٗ یو ٹرن نہیں لیتا : بلاول بھٹو

بھٹو کا نواسہ ہوں ٗ یو ٹرن نہیں لیتا : بلاول بھٹو

گانچھے:پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہاہے کہ میں بھٹو کا نواسہ، بے نظیر کا بیٹا ہوں، یو ٹرن نہیں لیتا، کھلاڑی نہیں کہ وعدے سے پھر جائوں،اسلام آباد میں بیٹھے لوگ فیصلے کرتے ہیں، آپ کی بات نہیں سنتے ،پیپلز پارٹی پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے جنگ لڑ رہی ہے،گلگت بلتستان میں بھی ہسپتال بن سکتے ہیں، مفت علاج ہوسکتا ہے اور یہ کام میں کروں گا، ہمیں دور دراز کے علاقوں میں یونیورسٹیاں بنانی پڑیں گی،تمام برطرف ملازمین کو فورا بحال کیا جائے۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اسکردو کے ضلع گانچھے میں ورکر کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں گلگت بلتستان کے عوام کے حقوق دینا پڑیں گے، اسلام آباد میں بیٹھے لوگ فیصلے کرتے ہیں، لیکن آپ کی بات نہیں سنتے، ہمیں گلگت بلتستان کو بچانا ہے، ظالم سلیکٹڈ حکومت نے کیا حال کردیا ہے۔خیبرپختونخوا میں کیا تباہی ہوئی ہے، پنجاب میں بھی تباہی کردی ہے ، صوبہ سندھ میں بھی وہ تباہی کرنا چاہتے ہیں جو دیگر صوبوں میں کی ہے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ ان کے پروپیگنڈہ پر یقین نہ کریں، یہ آپ کا مستقبل تباہ کریں گے، آپ کو تباہی سے بچانا ہوگا، آپ کو گھر گھر جا کر پیپلز پارٹی کا پیغام پہنچانا ہے، پیپلز پارٹی نے جمہوریت بحال کی ہے۔پیپلز پارٹی پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے جنگ لڑ رہی ہے، آپ نے ڈوگرہ راج سے آزادی چھینی تھی، ہم پاکستان میں کٹھ پتلی حکومت سے نظام چھین کر رہیں گے، اس ظالم حکومت نے لیڈی ہیلتھ ورکرز کو بھی نہیں چھوڑا۔

انہوں نے کہا کہ آج بھی ملازمین اسلام آباد میں دھرنے دے رہے ہیں جبکہ صدر زرداری کے دور میں بے نظیر انکم سپورٹ شروع کیا، تنخواہوں میں اضافہ ہوا، کراچی سے لے کر چھوٹے چھوٹے گائوں میں مفت علاج کی سہولت دی گئی۔گلگت بلتستان میں بھی ہسپتال بن سکتے ہیں، مفت علاج ہوسکتا ہے اور یہ کام میں کروں گا، ہمیں دور دراز کے علاقوں میں یونیورسٹیاں بنانی پڑیں گی۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ نااہل حکمران عوام کے ذریعہ معاش کے لیے سونامی بن کر آئے ہیں،مثالیں ریاست مدینہ کی دیتے ہیں لیکن ان کے کام ہٹلرسے بھی بدتر ہیں۔جب سے سلیکٹڈحکومت آئی ہے،عوام اچھی خبر سننے کو ترس گئی ہے، وفاقی کابینہ کا اجلاس ہو تو شہری سہم جاتے ہیں، وزیراعظم نوٹس لے تو ملک میں خوف کی لہر دوڑ جاتی ہے۔وفاقی کابینہ کاکام بجلی،گیس،تیل کی قیمتیں بڑھانااوربیروزگارکرناہے، حکومت کوخراب کارکردگی والا ایک ملازم برداشت نہیںہے توقوم نالائق وزیراعظم کو کیوں جھیلے؟