چوہوں نے نائجیریا کے صدر کو گھر سے کام کرنے پر مجبور کر دیا

چوہوں نے نائجیریا کے صدر کو گھر سے کام کرنے پر مجبور کر دیا

ابوجا: نائجیریا کے صدر اگلے تین ماہ اپنے گھر سے کام کریں گے کیونکہ چوہوں نے ان کی غیر موجودگی میں دفتر میں تباہی مچا دی۔ صدر محمد بخاری اپنی طبیعت کی ناسازی کے باعث گذشتہ تین ماہ سے برطانیہ میں وقت گزار رہے تھے۔ حکومت کے ترجمان گاربا شے ہو نے کہا ہے کہ دفتر میں صدر کی غیر موجودگی میں فرنیچر اور ایئر کنڈیشنر کو نقصان پہنچا تھا جس کی مرمت کرنے کی ضرورت ہے۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے انھوں نے بتایا کہ دفتر سے کام نہ کرنے کے باوجود صدر کو کوئی دشواری نہیں ہو گی کیونکہ ان کے گھر میں تمام ضروری سہولتیں موجود ہیں جن کی مدد سے وہ سرکاری کام کر سکیں گے۔ صدر بخاری جون 2016 میں لندن گئے تھے جس پر ان کے ترجمان نے کہا تھا کہ یہ دورہ کان کے انفیکشن کے علاج کے لیے ہے۔ اس کے بعد انھوں نے رواں سال پہلے جنوری اور پھر مئی میں بھی لندن کا دورہ کیا۔

حزب مخالف کا دعوی ہے کہ صدر بخاری کو پراسٹیٹ سرطان ہو گیا ہے لیکن صدر بخاری نے اس کی تردید کی ہے۔ صدر بحاری کے گھر سے کام کرنے کے فیصلے کو ملک کے عوام نے زیادہ پسند نہیں کیا ہے اور سرکاری طور پر دی جانے والی وجہ کا سوشل میڈیا پر مذاق اڑایا ہے۔ٹوئٹر پر ایک صارف نے لکھا یہ بالکل ممکن ہے کہ چوہوں نے صدر بخاری کا دفتر تباہ کر دیا ہے۔

نائیجیریا کے چوہے بہت خون خوار ہوتے ہیں۔ نائجیریا کے وکیل اور کالم نویس فیمی فانی فیود نے گاربا شے ہو کے بیان کے حوالے سے ٹویٹ کی 'لگتا ہے کہ چوہے بھی نہیں چاہتے صدر بخاری واپس آئیں۔

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں