سعودی حکومت نے شہزادہ ولید بن طلال کی رہائی کیلئے 6 ارب ڈالرز مانگ لیے

سعودی حکومت نے شہزادہ ولید بن طلال کی رہائی کیلئے 6 ارب ڈالرز مانگ لیے

جدہ:امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل نے دعویٰ  کیا ہے کہ سعودی حکام نے گرفتار شہزادے ولید بن طلال کی رہائی کے لیے 6 ارب ڈالرز مطالبہ کیا ہے.62 


سالہ شہزاہ بدعنونی کے الزام میں زیر حراست ہے۔

امریکی اخبار کے مطابق شہزادہ طلال کے قریبی دوستوں نے سعودی حکام کے مطالبے کے بارے میں بتایا۔ اخبار کے مطابق شہزادہ طلال رہائی کے بدلے بڑی قیمت ادا کرنے کوتیار بھی ہیں. شہزادے کو ریاض کے شاہی ہوٹل میں رکھا گیا ہے۔62 سالہ شہزادہ طلال دنیا کے 57 ویں امیر ترین آدمی ہیں. تفصیلات کے مطابق  گرفتار شہزادے ولید بن طلال کی دولت کا تخمینہ 18 ارب ڈالر لگایا ہے۔

سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی کرپشن کے خلاف مہم میں گزشتہ ماہ 62 سالہ شہزادہ طلال سمیت کئی اہم شخصیات کو گرفتار کیا تھا۔سعودی عرب میں بدعنوانی کے الزام میں گرفتار شہزادوں پر دوران تفتیش تشدد کیا گیا۔ شہزادہ الولید بن طلال کو الٹا لٹکا کر تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔