کراچی، مبینہ پولیس مقابلہ، فائرنگ کی زد میں آ کر طالبہ جاں بحق

کراچی، مبینہ پولیس مقابلہ، فائرنگ کی زد میں آ کر طالبہ جاں بحق
ابتدائی رپورٹ کے مطابق فائرنگ چھوٹے ہتھیار سے کی گئی۔۔۔۔۔۔فوٹو/ نیو نیوز

کراچی: نارتھ کراچی انڈہ موڑ کے قریب مبینہ پولیس مقابلے کے دوران میڈیکل کی طالبہ نمرہ بیگ دوطرفہ فائرنگ کی زد میں آ کر جاں بحق ہو گئی۔


شارع نور جہاں پر فائرنگ کی زد میں آنے والی میڈیکل کی طالبہ 22 سالہ نمرہ بیگ کو سر میں گولی لگی جس سے وہ شدید زخمی ہو گئی۔ نمرہ کو فوری طور پر جناح اسپتال لایا گیا تاہم وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گئی۔

پولیس کا کہنا ہےکہ سخی حسن کے قریب دو ملزمان کو واردات کرتے دیکھا گیا۔ ملزمان نے پولیس پر فائرنگ کی اور فرار ہو گئے۔ ملزمان کے تعاقب پر انڈہ موڑ پر ڈگری کالج کے قریب دوبارہ مقابلہ ہوا۔

پولیس کے مطابق 22 سالہ نمرہ کو گولی لگنے کی اطلاع اسپتال سے موصول ہوئی اور نمرہ کے پوسٹ مارٹم میں گولی کا سکہ نہیں ملا۔ ابتدائی رپورٹ کے مطابق فائرنگ چھوٹے ہتھیار سے کی گئی اور پولیس کے پاس 9 ایم ایم، ایس ایم جی تھی جب کہ ملزمان کے پاس ٹی ٹی پستول تھی۔

ایس ایس پی سینٹرل عارف راؤ نے بتایا کہ شارع نور جہاں پولیس پر پولیس کا ڈاکوؤں سے مقابلہ ہوا جس میں ایک ڈاکو ہلاک اور دوسرا زخمی ہوا جب کہ اس دوران طالبہ نمرہ دو طرفہ فائرنگ کی زد میں آ گئی۔

ایس ایس پی کا کہنا تھا کہ لواحقین کا پولیس اہلکاروں پر شک کا اظہار کرنا جائز ہے۔ لواحقین کو شفاف تحقیقات کی یقین دہانی کرائی گئی ہے اور نمرہ کا پوسٹ مارٹم ہو گیا ہے لہٰذا حقائق رپورٹ آنے کے بعد ہی سامنے آئیں گے۔

پولیس حکام نے کہا کہ اسلحے کی فرانزک رپورٹ کا انتظار ہے اور حتمی رپورٹ آنے کے بعد اسلحے کا تعین ہو سکے گا۔