گورنر ہاؤس میں سیف اللہ ابڑو کو 35 کروڑ روپےْ کے عوض سینیٹ ٹکٹ ملا، لیاقت جتوئی کا دعویٰ

گورنر ہاؤس میں سیف اللہ ابڑو کو 35 کروڑ روپےْ کے عوض سینیٹ ٹکٹ ملا، لیاقت جتوئی کا دعویٰ
کیپشن:   گورنر ہاؤس میں سیف اللہ ابڑو کو 35 کروڑ روپے کے عوض سینیٹ ٹکٹ ملا، لیاقت جتوئی کا دعویٰ سورس:   فائل فوٹو

دادو: سندھ میں سینیٹ انتخابات کو لیکر کروڑوں روپے میں ٹکٹ دینے کی افواہیں گردش کرنے لگی ہیں۔ سابق وزیراعلیٰ سندھ اور پاکستان تحریک انصاف کے رہنما لیاقت جتوئی نے اپنی ہی پارٹی قیادت پر الزامات کی بوچھاڑ کر دی۔ 

پریس کانفرنس کرتے ہوئے لیاقت جتوئی نے الزام لگایا کہ تحریک انصاف کی قیادت نے سیف اللہ ابڑو کو سینیٹ کا ٹکٹ 35 کروڑ میں بیچا اور گورنر ہاؤس میں سیف اللہ ابڑو کو 35 کروڑ روپے کے عوض سینیٹ ٹکٹ دیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں نظرانداز کیا جا رہا ہے اور وزیراعظم عمران خان کو خط لکھ دیا ہے۔ سندھ کے اہم فیصلے گورنر ہاؤس کے ڈرائنگ روم میں کئے جا رہے ہیں۔ لیاقت جتوئی نے نظرانداز کیے جانے پر پارٹی سے علیحدگی کا عندیہ بھی دے دیا جبکہ 26 فروری کو پارٹی رہنماؤں سمیت اپنے حامی لوگوں کا اجلاس بھی بلانے کا بھی اعلان کیا۔

خیال رہے کہ پی ٹی آئی کے رہنما سیف اللہ ابڑو کو الیکشن کمیشن نے پہلے ہی نااہل قرار دے رکھا ہے۔