امریکی صدر نے وسیع بنیادوں پر پارٹنرشپ قائم کرنیکی خواہش کا اظہار کیا، شاہ محمود

امریکی صدر نے وسیع بنیادوں پر پارٹنرشپ قائم کرنیکی خواہش کا اظہار کیا، شاہ محمود
صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ دونوں ممالک میں تجارت بڑھانے کے امکانات موجود ہیں، شاہ محمود۔۔۔۔۔۔۔فوٹو/ ریڈیو پاکستان

واشنگٹن: پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پاکستانیوں کو عظیم قوم اور وزیراعظم کو بھی عظیم لیڈر کہا جبکہ یہ پاکستان اور امریکا کے درمیان دوطرفہ تعلقات کا آغاز ہے۔


شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ پاکستان کے معروف وزیراعظم سے ملاقات کر رہا ہوں۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ پاکستان کے ساتھ ماضی سے ہٹ کر مضبوط تعلقات چاہتا ہوں۔ امریکی صدر نے وسیع بنیادوں پر پارٹنرشپ قائم کرنے کی خواہش کا اظہار کیا۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ امن کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ مسئلہ کشمیر ہے اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مسئلہ کشمیر کو پرامن طریقے سے حل کرنے کی خواہش کا اظہار کیا۔ وزیراعظم نے اوول آفس میں امریکی صدر کو تنازع کشمیر کے بارے میں بتایا۔

انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں طاقت کے بے جا استعمال پر عوام ردعمل دیتے ہیں اور بھارت میں بھی ایک بڑا طبقہ ہے جو امن کی خواہش رکھتا ہے۔

پریس کانفرنس میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ آج تک کسی امریکی صدر سے مسئلہ کشمیر کے حل کی خواہش کا اتنا برملا اظہار نہیں سنا۔ اس پر کوئی پیشرفت ہوتی ہے تو برصغیر میں بہتری کا امکان پیدا ہو گا اور بہتری کا امکان پیدا ہوتا ہے تو خطے کی ترقی پر دور رس اثرات مرتب ہوں گے۔ بھارت کی موجودہ حکمت عملی جاری رہی تو وہاں ردعمل ہو گا۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران نے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو پاکستان آنے کی دعوت دی اور ٹرمپ نے پاکستان کے دورے کی دعوت قبول کر لی۔

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ دونوں ممالک میں تجارت بڑھانے کے امکانات موجود ہیں۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ ہمارے درمیان تجارت ناکافی ہے اور انہوں نے تجارت میں 20 گنا تک اضافے کی خواہش کا اظہار کیا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ آج کی نشست میں افغانستان کے ساتھ دوطرفہ تعلقات کا ذکر بھی ہوا۔انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم نے سرمایہ کاروں کے ساتھ کئی نشستیں کیں اور واضح کیا کہ ہم ایڈ نہیں ٹریڈ چاہتے ہیں۔