5500 میٹر بلند چوٹی تین پاکستانی خواتین نے سر کر لی

5500 میٹر بلند چوٹی تین پاکستانی خواتین نے سر کر لی

گلگت :پاکستان کی کوہ پیما خواتین نے بڑی کامیابی حاصل کر لی،پاکستان کی تین خواتین کوہ پیماوں نے بطور ٹیم 5500میٹر اونچی کوکسل چوٹی کو سر کرکے پہلی نیشنل ویمن ایکسپیڈشن مکمل کرلی


پہلی ویمن ایکسپیڈشن کا اصل ہدف سات کوہ پیماوں کے ساتھ ’پاسو پیک ‘کو سر کرنا تھا لیکن اکثر کوہ پیما اسپانسرز نہ ہونے کی وجہ سے دستبردار ہوگئیں۔لیکن کومل عزیر، سلطانہ امیرالدین اور سمانا رحیم تمام مسائل اور پریشانیوں کو ایک طرف رکھ ثمینہ بیگ کے بھائی مرزا علی کی قیادت میں ایکسپیڈیشن پر سات ہزار دو سو چوراسی میٹر اونچی پاسو پیک کی جانب بڑھیں لیکن گلیشیئر ٹوٹنے اور راستہ خراب ہونے کے سبب یہ ٹیم چار ہزار نو سو میٹر سے آگے نہ بڑھ سکی۔

وہاں سے واپس روانگی پر ٹیم نے یہ فیصلہ کیا کہ اب شمشال میں 6008 میٹر بلند کوہ بروبر کو سر کیا جائے گا لیکن وہاں بھی اس ٹیم کے لیے ایک بری خبر منتظر تھی۔

اسی لیے ٹیم نے واپس نیچے جانے کی تیاری شروع کی اور اس کے لیے پورٹرز کو بھی بلایا گیا لیکن گلیشئر کے پگلھنے کی وجہ سے دریائے شمشال میں پانی کے تیز بہاو سے شمشال روڈ مکمل طور پر ٹوٹ چکا تھا اور راستے مکمل منقطع ہو گئے تھے۔

اس کے بعد خنجراب میں کوکسل پیک کو سر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے،ساتھی کوہ پیما کا کہنا ہے خواتین کوہ پیماہ وں کا حوصلہ اور جرات قابل دید ہے.