ملزم عمران کی درندگی کا نشانہ بننے والی 6 سالہ کائنات کی حالت سنبھل نہ سکی

لاہور: زینب سمیت 10 بچیوں کے ساتھ زیادتی کا اعتراف کرنیوالے سفاک قاتل عمران کی درندگی کا شکار ہونے والی 6 سالہ کائنات کی حالت سرجری کے باوجود سنبھل نہیں سکی اور وہ تاحال چلڈرن ہسپتال لاہور میں زیرِعلاج ہے ۔
رپورٹس کے مطابق قصور کی 6 سالہ کائنات کے والد نے مطالبہ کیا ہے کہ ملزم عمران کوعبرت ناک سزا دی جائے۔کائنات کے والد نے بتایا کہ 13 نومبر 2017ءکو کائنات کو گھر کے باہر سے اغواءکیا گیا۔انہوں نے کہا کہ دوسرے دن بچی نیم مردہ حالت میں ملی،،تب سے وہ ذہنی اورجسمانی طورپر معذور ہوچکی ہے۔درندہ صفت عمران کے بارے میں کائنات کے والد نے کہا کہ وہ اسے نہیں جانتے،اس کا گھر ان کے گھر سے آدھا کلو میٹر دور ہے۔ کائنات کے والد احسان الٰہی نے کہا کہ ملزم کو اذیت ناک موت کی سزا دی جانی چاہیے، واقعے کے بعد سے ان کاجینا اب کوئی جینا نہیں رہا، وہ کائنات کو دیکھ دیکھ کر خون کے آنسو روتے ہیں۔
چلڈرن اسپتال کے ڈین ڈاکٹر مسعود صادق نے بتایا کہ کائنات کی رپورٹس امریکا اور لندن کے اسپتالوں میں بھجوادی ہیں،جواب ملتے ہی اسے بیرون ملک بھیجنے کا فیصلہ کیا جائے گااسپتال انتظامیہ کا کہنا ہے کہ کائنات کی سرجری کے بعد فزیو تھراپی بھی کی جارہی ہے تاکہ اس کی حالت میں بہتری آسکے۔
خیال رہے کہ دو ماہ قبل قصور میں زیادتی کا نشانہ بننے والی 6 سالہ کائنات بتول کے دماغ میں پانی بھر جانے کے باعث لاہور کے چلڈرن اسپتال میں رواں ماہ اس کی ہنگامی سرجری کی گئی تھی۔