فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کیلئے متفقہ بل آج قومی اسمبلی میں پیش کیا جائے گا

فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کیلئے متفقہ بل آج قومی اسمبلی میں پیش کیا جائے گا
حکومتی اتحادی مولانا فضل الرحمان اورمحموداچکزئی بائیکاٹ کرینگے...فائل فوٹو

اسلام آباد:فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کے لئے حکومت ، اپوزیشن متفقہ بل آج قومی اسمبلی میں پیش کرے گی جبکہ حکومتی اتحادی مولانا فضل الرحمان اورمحموداچکزئی بائیکاٹ کرینگے۔


یہ بھی پڑھیں:جو مریض اپنا علاج بیرون ملک کراتا تھا اب اس کا علاج یہاں بالکل مفت کیا جائے گا: شہباز شریف

بل منظور کرانے کیلئے دوسوچوبیس ارکان کی حاضری ضروری ہوگئی جس کے لئے سیاسی جماعتوں کو ٹاسک مل گیاہے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے قانونی امور بیرسٹر ظفر اللہ کا کہنا ہے کہ فاٹا اصلاحات کے آئینی بل پرتمام جماعتیں متفق ہوچکی ہیں جو آ قومی اسمبلی میں پیش کردیا جائے گا۔

گزشتہ روز ہونے والے پارلیمانی رہنماﺅں کا پانچواںاجلاس وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت ہوا،جس میں بیرسٹر ظفر اللہ نے فاٹا اصلاحات کا آئینی مسودہ پیش کیا تاہم حکومتی اتحادیوں نے فاٹا اصلاحات کے حوالے سے اختلاف رائے کا اظہار کیا، جبکہ جے یو آئی ف اور پختونخوا ملی عوامی پارٹی کے اراکین نے اجلاس کا بائیکاٹ کیا۔

یہ بھی پڑھیں:مکھی سے پریشان برطانوی شہزادہ ہیری تقریر بھول گئے

حکومتی اتحادیوں کا کہنا تھا کہ ہماری قومی اسمبلی کی 12 سیٹیں قائم رکھی جائیں اور ایک قومی اسمبلی کی نشست کے ساتھ دو صوبائی اسمبلی کی نشستیں دی جائیں۔ اتحادیوں نے مطالبہ کیا کہ آئی ڈی پیز جب دوبارہ واپس آئیں تو ایک بار پھر مردم شماری کی جائے۔

واضح رہے کہ فاٹا اصلاحات کے آئینی مسودے کے مطابق فاٹا سے قومی اسمبلی کی 12 نشستیں اور سینیٹ کی موجودہ نشستیں اگلے 5 سال تک برقرار رہیں گی۔ایک سال میں صوبائی انتخابات ہوں گے جو الیکشن کمیشن الیکشن کرائے گا۔

یہ بھی پڑھیں:پیپلزپارٹی کے مرکزی نائب صدر میاں منظور احمد وٹو نے زرداری کو بڑا جھٹکا دیدیا

فاٹا میں صوبائی قوانین کا فوری اطلاق ہو گا اور منتخب حکومت قوانین پر عمل درآمد کے حوالے سے فیصلہ کرے گی۔این ایف سی ایوارڈ کے تحت فاٹا کو 24 ارب روپے کے ساتھ 100 ارب روپے اضافی ملیں گے اور 10 سال کے لیے 1000 ہزار ارب روپے کا خصوصی فنڈ ملے گا جو کسی اور جگہ استعمال نہیں ہو سکے گا۔سپریم کورٹ اور پشاور ہائی کورٹ کا دائرہ کار فاٹا تک بڑھانے اور ایف سی آر کے مکمل خاتمے پر اتفاق کیا گیا ہے۔

    نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں