ڈنمارک اور فن لینڈ نے سعودی عرب کو اسلحے کی فروخت بند کر دی

ڈنمارک اور فن لینڈ نے سعودی عرب کو اسلحے کی فروخت بند کر دی
اسلحہ سپلائی بند کرنے کا فیصلہ یمن جنگ اور صحافی جمال خاشقجی واقعے کے باعث کیا گیا ہے، وزیر خارجہ ڈنمارک۔۔۔۔فائل فوٹو

کوپن ہیگ: جرمنی کے بعد ڈنمارک اور فن لینڈ نے بھی سعودی عرب کو اسلحے کی فروخت بند کر دی۔ برطانیہ اور فرانس کی جانب سے بھی اسلحہ سپلائی میں کمی کی گئی ہے جبکہ امریکا اسلحہ دینے والے ممالک میں سرفہرست ہے۔


امریکی میڈیا کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ڈنمارک اور فن لینڈ نے سعودی عرب کو اسلحے کی فروخت بند کرنے کا اعلان کیا ہے اس سے قبل جرمنی نے سعودی عرب کو اسلحہ کی فروخت مزید محدود کرتے ہوئے جاری معاہدے بھی ختم کرنے کا اعلان کیا تھا۔

ڈنمارک کے وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ اسلحہ سپلائی بند کرنے کا فیصلہ یمن جنگ اور صحافی جمال خاشقجی واقعے کے باعث کیا گیا ہے۔اسٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے اعدادو شمار کے مطابق برطانیہ اورفرانس کی جانب سے بھی سعودی عرب کو اسلحے کی فروخت میں کمی آئی ہے۔ برطانیہ نے 2016 میں 843 ملین، 2017 میں 436 ملین ڈالر کا اسلحہ سپلائی کیا۔

فرانس نے 2015 میں 174 ملین، 2016 میں 91 ملین اور 2017 میں 27 ملین ڈالر کا اسلحہ فراہم کیا۔ اسپین کی جانب سے بھی اسلحے کی سپلائی میں کمی دیکھی گئی ہے۔

سعودی عرب مختلف ممالک سے سالانہ 4.1 ارب ڈالر مالیت کا اسلحہ خرید رہا ہے جس میں امریکا 61 فیصد سپلائی کے ساتھ سرفہرست ہے۔امریکا 3.4 ارب، برطانیہ 436 ملین، فرانس 27 ملین جبکہ دیگر ممالک 225 ملین ڈالر کا اسلحہ سپلائی کر رہے ہیں۔

ہتھیارفروخت کرنے والے ممالک میں کینیڈا، چین، ترکی، جنوبی افریقا، جارجیا، سربیا اور اٹلی بھی شامل ہیں۔