مشال خان قتل کیس کے ڈائریکٹر پراسیکوشن مقدمہ سے دستبردار


ہری پور:مشال خان قتل کیس کے ڈائریکٹر پراسیکوشن مقدمہ سے دستبردارمثال قتل کیس میں ظفر عباس چار رکنی سرکاری ٹیم کی سربراہی کر رہے تھے مثال خان قتل کیس میںگرفتار ملزمان کے رشتہ داروں سے دھمکیاں مل رہی تھیں ۔


تفصیلات کے مطابق انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے ڈائریکٹر کی پراسیکوشن ٹیم سے علیحدگی کی درخواست منظور کر لی ہے مشال خان قتل کیس کی دسویں سماعت کل سنٹرل جیل ہری پور کی ٹرائل کورٹ میں ہوگی جہاں دیگر گواہوں کے بیانات قلمبند کے جائیں گیں۔مشال خان قتل کیس کی سرکاری ٹیم کے ڈائریکٹر پراسیکوشن ظفر عباس نے مقدمہ سے الگ ہونے کے لیے درخواست جمع کر ا رکھی تھی جوکہ گزشتہ روز انسداد دہشت گرد ی کی خصوصی عدالت نے ان کی درخواست منظور کرلی ہے


ذرائع نے بتایا ہے کہ ظفر عباس کو مشال خان قتل کیس میں گرفتار ملزمان کے قریبی رشتہ داروں کی جانب سے مبینہ دھمکیاں موصول ہو رہی تھی جن بناء پر ان کو مقدمہ کی سرکاری سربراہی کرنے میں خدشات درپیش تھے اس سمیت دیگر وجوہات کی بناء پر انھوں نے مقدمہ سے دستبرداری کا فیصلہ کر رکھا تھا ان کے اس فیصلے کے بعد سرکاری طور پر اب نئے ڈائریکٹر کو تعینات کیا جائے گاجوکہ پراسیکوشن کی سربراہی کریں گیں مشال خان قتل کیس کی دسویں سماعت کل بروز بدھ سنترل جیل میں قائم دہشت گردی کی خصوصی عدالت میں ہوگئی