بغاوت کی کارروائی، نواز شریف 8 اکتوبر کو ذاتی حیثیت میں طلب

بغاوت کی کارروائی، نواز شریف 8 اکتوبر کو ذاتی حیثیت میں طلب
وکیل نصیر بھٹہ نے چالیسویں کے بعد کی تاریخ رکھنے کی استدعا ہے۔۔۔۔فائل فوٹو

لاہور: بغاوت کی درخواست پر سماعت کے دوران عدالت نے سابق وزیراعظم نواز شریف کو 8 اکتوبر کو ذاتی حیثیت میں طلب کر لیا۔لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں تین رکنی فل بینچ نے سابق وزرائے اعظم نواز شریف اور شاہد خاقان عباسی کے خلاف بغاوت کی کارروائی کے لیے درخواست پر سماعت کی۔


اس موقع پر سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی عدالت کے روبرو پیش ہوئے جب کہ نواز شریف پیش نہ ہوئے۔

وکیل نصیر بھٹہ ایڈووکیٹ نے نواز شریف کی عدم پیشی سے متعلق بتایا کہ ان کی اہلیہ کے انتقال کے بعد لوگ افسوس کے لیے آ رہے ہیں اس لیے چالیسویں کے بعد کی تاریخ رکھنے کی استدعا ہے۔

اس موقع پر جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی نے کہا کہ مقدمے کو 8 اکتوبر کو سن لیتے ہیں۔ نواز شریف آئندہ سماعت پر ذاتی حیثیت میں پیش ہوں۔

عدالت نے صحافی سرل المیڈا کے پیش نہ ہونے پر ان کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے سماعت 8 اکتوبر کے لیے ملتوی کر دی۔

یاد رہے کہ گزشتہ سماعت پر عدالت نے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے جس کے بعد وہ آج عدالت کے روبرو پیش ہوئے۔