سعودی عرب کے لئے21 مزید پروازوں کا خصوصی اجازت نامہ مل گیا ہے، ترجمان پی آئی اے

سعودی عرب کے لئے21 مزید پروازوں کا خصوصی اجازت نامہ مل گیا ہے، ترجمان پی آئی اے

 اسلام آباد : قومی ائیر لائن(پی آئی اے) کے ترجمان عبداللہ خان نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی خصوصی کاوشوں سے پی آئی اے کو سعودی عرب کے لئے21 مزید پروازوں کا خصوصی اجازت نامہ مل گیا ہے۔


ترجمان کی طرف سے جاری اعلامیہ کے مطابق گزشتہ رات پی آئی اے کے چیف ایگزیکٹو افسر ائیر مارشل ارشد ملک نے وزیراعظم سے لوگوں کی پریشانی اور بے پناہ رش حل کرنے کیلئے کردار ادا کرنے کی استدعا کی تھی ۔ اعلی سطحی سفارتی ذرائع استعمال کرنے کے بعد صرف پی آئی اے کو خصوصی طور پر مزید پروازیں جاری کرنے کا پروانہ جاری کیا گیا ہے۔ترجمان نے کہا کہ زیادہ تر اقامے جو 30 ستمبر کو مدت پوری کررہے ہیں کی وجہ سے پی آئی اے کے دفاتر اور ایجنٹس کے پاس غیر معمولی رش ہوگیا تھا ۔ کچھ عناصر نے موقع سے فائدہ اٹھا کر کئی گنا مہنگے ٹکٹس فروخت کرنے شروع کردیے تھے۔

ترجمان نے کہا کہ سی ای او پی آئی اے نے معاملے کا نوٹس لیتے ہوئےاصل کرائے شائع کروائے اور مزید پروازوں کی اجازت طلب کی تھی۔ پی آئی اے کی ہفتہ وار 23 پروازیں پاکستان کے مختلف شہروں سے سعودی عرب روانہ ہو رہی ہیں جن میں گنجائش 12000 افراد کی ہے۔ترجمان نے کہا کہ 13 مزید پروازیں سماج فاصلے کی قوانین کے ساتھ آپریٹ کرنے سے مزید 3500 کی گنجائش پیدا ہوئی جو طلب سے بہت کم تھی ۔ وزیراعظم کی مداخلت کے ساتھ 21 مزید پروازوں کے سسٹم میں آنے کے بعد پی آئی اے کی صلاحیت 25،500 افراد کی ہوگئی ہے۔ ترجمان نے کہا کہ یہ تمام افراد 30 ستمبر سے پہلے سعودی عرب روانہ ہوجائیں گے ۔ ترجمان نے کہا کہ اکتوبر کے مہینے کیلئے پی آئی اے نے پہلے ہی اپنی پروازیں دوگنی کرنے کیلئے سعودی حکام سے درخواست کرلی ہے۔

ترجمان کے مطابق پی آئی اے کے چیف ایگزیکٹو افسر ائیر مارشل ارشد ملک نے کہا ہے کہ پی آئی اے صدر و وزیراعظم پاکستان، وزیر ہوابازی, وزیر خارجہ اور سیکٹری خارجہ کی خصوصی مشکور ہے۔ اس وقت جب ہمارے ہم وطن شدید پریشانی میں مبتلا تھے وزیراعظم کے کردار کے باعث اب با آسانی سعودیہ روزگار کیلئے جاسکے گیں۔ انہوں نے مزید کہا ہے کہ پی آئی اے وزارت خارجہ سے بات چیت کررہی ہے کہ اقامہ کی مدت میں توسیع کیلئے بھی سعودی حکام سے بات کریں۔ ایئر مارشل ارشد ملک ہر مشکل گھڑی میں پی آئی اے قوم کے شانہ بشانہ کھڑی ہوتی ہے۔