حکومت نے پی پی اور تحریک انصاف کو ایک بار پھر اکٹھا کردیا

حکومت نے پی پی اور تحریک انصاف کو ایک بار پھر اکٹھا کردیا

اسلام آباد: حکومت نے تحریک انصاف اور پیپلز پارٹی کو ایک مرتبہ پھر متحد پونے کا موقع فراہم کردیا ہے اور 24 ویں ترمیم پر دونوں جماعتیں یک زبان ہو کر ترمیم کی مخالفت کر رہی ہیں۔


سندھ کے دو روزہ دورہ پر کراچی پہنچنے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے پاکستان تحریک انصاف کے نائب صدر شاہ محمود قریشی نے کہا کہ 24 ویں ترمیم کا بل عوام کے لیے نہیں ذاتی مفاد کے لیے لایا جارہا ہے ۔ پاناما لیکس میں ن لیگ کا مقدمہ کمزور ہے اور راستہ نکالنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔

ان کا کہنا تھاکہ معاملے کو طول دینے کے لیے حربے استعمال کیے جارہے ہیں، احتساب بل میں ہم ایوان کے اندر اور باہر حکومت کی مخالفت کریںگے، حکومت کو 24 ویں ترمیم واپس لینا ہوگی وہ عوام کے لیے نہیں صرف ذاتی ہے ۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ لائن آف کنٹرول پر بھارت سیاست کررہا ہے حکومت کہاں ہے اور کیوں خاموش ہے ۔ ن کا کہنا تھاکہ کشمیر پر حکومت کی کوئی پالیسی نہیں ہے حکومت تمام معاملات میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے ۔

دوسری طرف اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتےسینیٹ میں اپوزیشن لیڈراعتزاز احسن کا کہنا ہے کہ 24 ویں آئینی ترمیم سیاسی مفادات کیلئے لائی جا رہی ہے۔ پیپلز پارٹی اس کی بھرپور مخالفت کرے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ نواز شریف کے وکلا نے آگاہ کر دیا ہے کہ وہ اس کیس میں بچ نہیں سکتے۔

لاہور میں ڈکیتی اور ٹارگٹ کلنگ کی حالیہ وارداتوں سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے اعتزاز احسن نے کہا کہ شہباز شریف نے لاہور کو ڈاکوﺅں کے ہاتھوں میں تھما دیا۔ انہوں نے کہا کہ ایسا ہونا ہی تھا کیونکہ شریف خاندان مال بنانے میں لگا ہوا ہے اور شہریوں کے تحفظ کی طرف کسی کی توجہ نہیں۔