خطے کے آمروں کے ساتھ جو ہوا اسکے بارے میں سوچیں،ایران

خطے کے آمروں کے ساتھ جو ہوا اسکے بارے میں سوچیں،ایران

ایران نے سعودی عرب کے ولی عہد کےبارے میں انتہائی خطرناک بیان جاری کر دیا


تہران :ایران کے دفتر خارجہ نے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سے کہا ہے کہ خطے کے مشہور آمروں کے ساتھ جو ہوا ہے اس کے بارے میں سوچیں۔ایرانی دفتر خارجہ کے ترجمان بہرام قاسمی نے محمد بن سلمان کی جانب ایران کے رہبرِ اعلیٰ آیت اللہ خامنہ ای کو 'مشرقِ وسطیٰ کے نیا ہٹلر' کہنے کے جواب میں یہ بیان جاری کیا ہے۔

نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی اثنا کے مطابق بہرام قاسمی نے کہا کہ 'سعودی شہزادے کے نادان اور بے بنیاد بیانات اور رویے کا نتیجہ یہ ہوا ہے کہ دنیا میں کوئی بھی ان کے بیانات کو اہمیت نہیں دیتا۔ایرانی دفتر خارجہ کے ترجمان نے مزید کہا کہ مہم جو سعودی شہزادے کی غلطیوں کے باعث مشکلات پیدا ہوئی ہیں اور ان غلطیوں میں تازہ ترین لبنان کے اندرونی معاملات میں مداخلت کا سکینڈل ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ 'میں ان (سعودی شہزاردے) کو مشورہ دیتا ہوں کہ گذشتہ چند سالوں میں خطے کے مشہور آمروں کی قسمت کے بارے میں سوچیں اور غور کریں کیونکہ اب وہ ان کی پولیسیوں اور رویوں کو اپنا رول ماڈل بنا رہے ہیں۔

واضح رہے کہ سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان نے امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ 'ہم نے یورپ سے سیکھا ہے کہ خوشامدانہ پالیسی کام نہیں کرتی۔ ہم نہیں چاہتے کہ ایران کے نئے ہٹلر مشرقِ وسطیٰ میں وہ دہرائیں جو ہٹلر نے یورپ میں کیا تھا۔

محمد بن سلمان نے انٹرویو کے دوران کہا کہ سعودی عرب اور اس کے ہم خیال عرب ملک خطے میں بڑھتے ہوئے ایرانی اثر و نفوذ پر بند باندھنے کے لیے امریکی صدر ٹرمپ کی پشت پناہی سے اتحاد قائم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔