وزیر اعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس مالی سال 2017-18 کیلئے بجٹ تجاویز کی منظوری

وزیر اعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس مالی سال 2017-18 کیلئے بجٹ تجاویز کی منظوری

اسلام آباد: وزیر اعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس، بجٹ تجاویز کی منظوری، شنگھائی تعاون تنظیم میں پاکستان کی رکنیت کی بھی منظوری دیدی گئی۔


ذرائع کے مطابق وزیر اعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس ہوا جب کہ شنگھائی تعاون تنظیم میں پاکستان کی مکمل شمولیت کے اشتراکی مسودے اور وزارت پانی وبجلی کے پی پی آئی بی ایکٹ 2010 میں ترمیمی بل کی بھی منظوری دے دی، ۔ وفاقی کابینہ نے اقتصادی رابطہ کمیٹی کے فیصلوں کی توثیق کر دی۔

کابینہ اجلاس میں کابینہ کمیٹی برائے توانائی کے فیصلوں کی بھی توثیق کی گئی۔کابینہ اجلاس میں 12 نکاتی ایجنڈے پر غور کیا گیا۔ وزیر اعظم نے حکومت کی اقتصادی پالیسیوں پر کابینہ کو اعتماد میں لیا۔ اجلاس میں بجٹ تجاویز مالی سال 2017-18 کیلئے کی منظوری دی گئی۔اس سے قبل وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے بجٹ تجاویز پر اجلاس کو بریفنگ دی۔ وزیر خزانہ نے پیش کئے گئے اقتصادی سروے 17-2016 پر بھی کابینہ کو بریف کیا۔ بجٹ کے حوالے سے کابینہ ارکان کی تجاویز بھی لی گئیں۔

اس سے قبل پارلیمنٹ ہاوس اسلام آباد میں وزیراعظم نوازشریف کی زیر صدارت مسلم لیگ (ن)کی پارلیمانی پارٹی کا اجلاس ہوا، جس میں موجودہ حکومت کی جانب سے پیش کیے جانے والے پانچویں اور آخری بجٹ پرتبادلہ خیال کیا گیا۔ اجلاس کے دوران وزیر خزانہ اسحاق ڈار مسلم لیگ (ن) کے ارکان پارلیمنٹ کو بجٹ کے خدو خال پر بریفنگ دی جب کہ بجٹ کو عوام کو ریلیف دینے کے لیے ارکان کی تجاویز بھی لی گئیں۔اجلاس کے دوران وزیر اعظم نے کہا کہ 2013 میں ہمیں بڑے مسائل ورثے میں ملے ۔ ہم نیک نیتی کے ساتھ کام کررہے ہیں کیونکہ ہم عوام کے جواب دہ ہیں، ہرصورت میں اصلاحات کا ایجنڈا مکمل کریں گے ، ملک میں امن و امان کی صورتحال بہتر اورمستحکم ہوئی ہے ، پورے ملک کو موٹر وے اور سڑکوں کا جال بچھا کر جوڑ دیا گیا ہے۔

فاٹا ، گلگت بلتستان کی دیگر صوبوں کی طرح مساوی ترقی کے اقدامات کر رہے ہیں ۔ ملکی تاریخ میں پہلی بار ایک ہزار ارب روپے سے زائد کا ترقیاتی بجٹ مختص کیاجا رہاہے۔ اب قوم فیصلہ کرے گی کہ کس نے کارکردگی دکھائی اور کس نے کچھ نہیں کیا، ہم نے بہت محنت کی اوراس کے نتیجے میں آج منصوبے تیزی سے مکمل ہو رہے ہیں، آئندہ چند ماہ میں 3600 میگا واٹ بجلی قومی گرڈ میں شامل ہوجائے گی

#/S