'کسی بھی ملک یا قوم کو طاقت کے ذریعے مذاکرات کی میز تک نہیں لایا جا سکتا'

'کسی بھی ملک یا قوم کو طاقت کے ذریعے مذاکرات کی میز تک نہیں لایا جا سکتا'
پاسداری کا جواب پاسداری، بد عہدی کا بد عہدی، دھمکی کا دھمکی سے جواب دیا جائے گا، ایرانی صدر۔۔۔۔۔۔ فوٹو/ اے ایف پی

نیو یارک: ایرانی صدر حسن روحانی نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب میں کہا کہ امریکی حکومت نے تمام عالمی اداروں کو غیرمؤثر کر دیا ہے۔ موجودہ امریکی حکومت سے کیسے معاہدہ ہو جس نے پچھلی حکومت کی پالیسیوں کو خراب کیا۔


ایرانی صدر نے کہا کہ امریکا کی ایران کیلئے پالیسیاں شروع سے ہی خراب رہی ہیں اور ایرانی عوام کی خواہشات کے خلاف امریکی پالیسیاں ناکام ہوئی ہیں۔ کسی بھی ملک یا قوم کو طاقت کے ذریعے مذاکرات کی میز تک نہیں لایا جا سکتا۔

روحانی نے کہا کہ دھمکیاں دینے کے بجائے بات چیت شروع کریں جبکہ عالمی قوانین اور اخلاقیات کے منافی غیرمنصفانہ پابندیاں ختم کریں۔ کوئی جنگ، دھمکی، پابندیاں نہیں صرف قانون کی پاسداری کریں اور ہمارا پیغام واضح ہے۔ پاسداری کا جواب پاسداری، بد عہدی کا بد عہدی، دھمکی کا دھمکی سے جواب دیا جائے گا۔ ایرانی صدر نے کہا کہ مذاکرات کا جواب مذاکرات سے ہوگا۔

خیال رہے کہ امریکی صدر کا جنرل اسمبلی سے خطاب میں کہنا تھا کہ ایران کی کرپٹ آمریت مشرق وسطیٰ میں تباہی اور عدم استحکام کا سبب ہے اور ایرانی جارحیت کی قیمت اس کے ہمسائے چکا رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایران پڑوسی ممالک کی خودمختاری کا احترام نہیں کرتا لہٰذا تمام ممالک ایران کو اس کے جارحانہ رویے پر تنہا کریں۔

امریکی صدر نے کہا کہ 5 نومبر سے ایرانی تیل کی فروخت پر پابندی لگائیں گے، ایران پر پابندیاں خطے میں عدم استحکام کے لیے ایرانی فنڈنگ روکنے کی کڑی ہے۔