کورونا کا جعلی ڈاکٹر بیٹوں سمیت گرفتار، عمرقید کی سزا کا امکان

کورونا کا جعلی ڈاکٹر بیٹوں سمیت گرفتار، عمرقید کی سزا کا امکان
سورس:   file photo

فلوریڈا، دنیا بھر میں جہاں کوویڈ19 کی وجہ سے لوگ پریشان ہیں وہیں پر ایسے لوگ بھی موجود ہیں جو اس موقع پر بھی ناجائز کمائی کا موقع ہاتھ سے نہیں جانے دے رہے ۔ پاکستان ہویا امریکا ایسے موقع پرست لوگ کہیں نہ کہیں ضرور سرگرم ہیں جو لوگوں سے کورونا وائرس کے علاج کے بہانے لوٹنے میں مصروف ہیں ۔ 

تفصیلات کے مطابق امریکی ریاست فلوریڈا میں حکام نے باپ اور بیٹے کو گرفتار کرلیا ہے جو کوویڈ19 کے علاج کے لئے صنعتی بلیچ تیار کرکے فروخت کررہے تھے ۔ 

قانون کے مطابق ان دونوں باپ بیٹے کو عمر قید کی سزا ہونے کا امکان ہے ۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق گرفتار ملزمان صنعتی بلیچ کو گھر ہی میں پکا کر فروخت کرتے تھے۔ ابتدائی تفتیش کے مطابق گرفتار ملزمان اب تک  ایک ملین ڈالرز کی صنعتی بلیچ پکا کر فروخت کرچکے ہیں ۔ 

 پولیس کا کہنا ہے کہ باپ اوربیٹوں نے کورونا سے متاثرہ مریضوں کو صحتیابی کا جھانسہ دے کر جو کچھ فروخت کیا ہے وہ بلیچ ہے جسے انہوں نے اپنے گھر کی پچھلی سائیڈ کے شیڈ میں پکا کر تیار کیا تھا۔

برطانوی جریدے کے مطابق مارک گیرن نامی شخص آرک بشپ ہے اور اس نے تیار کردہ انتہائی خطرناک محلول کو ایم ایم ایس کے نام سے فروخت کیا اور بھاری منافع کمایا ہے۔

پولیس کی جانب سے کی جانے والی ابتدائی تفتیش کے مطابق گیرن اور اس کے تینوں بیٹوں نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کا تیار کردہ محلول کووڈ 19کو ختم کرنے کی مکمل صلاحیت رکھتا ہے۔

پولیس کے مطابق عالمی وبا قرار دیے جانے والے کورونا وائرس کے آغاز پر انہوں نے اس محلول کو فروخت کرکے ہر ماہ ایک لاکھ 32 ہزار ڈالرز تک کمائے ہیں۔

امریکہ کے سرکاری حکام کے مطابق وہ لوگ جو کچھ محلول فروخت کر رہے تھے وہ دراصل ایک بلیچ ہے جسے عام طور پر ٹیکسٹائل یا صنعتی کارخانے میں استعمال کیا جاتا ہے۔ حکام کے مطابق اس سے پیدا ہونے والی کھانسی انتہائی مہلک ثابت ہو سکتی ہے۔

گرفتار ملزمان میں 62 سالہ مارک گیرن اور اس کے تین بیٹے جوناتھن، جوزف اور اردن شامل ہیں۔ عدالت میں جرم ثابت ہونے پر انہیں عمر قید کی سزا کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔

گرفتار ملزمان کی جانب سے یہ دعویٰ بھی کیا گیا ہے کہ ان کا تیار کردہ محلول جو دراصل کلورین ڈائی آکسائیڈ ہے، نہ صرف کوویڈ 19 کا علاج کرسکتا ہے بلکہ کینسر اور ملیریا سمیت دیگر بیماریوں میں بھی شفا کا سبب ہے۔

امریکی حکام نے واضح طور پرخبردار کیا ہے کہ گرفتار ملزمان کا تیار کردہ ایم ایم ایس محلول پینا انتہائی خطرناک ہے جو مہلک بھی ثابت ہوسکتا ہے۔