میلبرن ٹیسٹ :پاکستان نے آسٹریلیا کے خلاف 6وکٹوں کے نقصان پر310 رنز بنا لئے

میلبرن ٹیسٹ :پاکستان نے آسٹریلیا کے خلاف 6وکٹوں کے نقصان پر310 رنز بنا لئے

میلبرن: دوسرے  ٹیسٹ میں پاکستان نے آسٹریلیا کے خلاف 6وکٹوں کے نقصان پر310 رنز بنا لئے ہیں،جبکہ بارش کے باعث دوسرے روز کا کھیل بھی ختم کردیا گیا۔دوسرے ٹیسٹ میں اظہر علی نے آسٹریلیا کے خلاف شاندار سینچری بناتے ہوئے 139 رنز سکور کئے جبکہ ان کے ساتھ محمد عامر کریز پر موجود ہیں۔اس سے قبل  بھی کھانے کے وقفے کے بعد بارش کے باعث میچ روک دیا گیا تھا۔


دوسرے روز اظہر علی اور اسد شفیق نے 142 رنز 4 کھلاڑی آﺅٹ پر نامکمل اننگز کا آغاز کیا تو دونوں بلے بازوں نے پانچویں وکٹ کی شراکت میں 115 رنز جوڑ کر مجموعی سکور کو 240 رنز پر پہنچا کر میچ کو دلچسپ بنا دیا۔ اظہر علی نے شاندار بلے بازی کرتے ہوئے سنچری مکمل کی جبکہ برسبین ٹیسٹ کی دوسری اننگز میں یادگار سنچری سکور کرنے والے اسد شفیق نے نصف سنچری بنائی۔ اسد شفیق 240 کے مجموعی سکور پر برڈ کی گیند پر سمتھ کے ہاتھوں کیچ ہو گئے۔ پاکستان کی چھٹی 268 کے مجموعی سکور پر گری اور سرفراز احمد 10 رنز بنا کر جوش ہیزل ووڈ کی گیند پر رنشاءکے ہاتھوں کیچ ہو گئے۔ 

پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان کھیلے جانے والی سیریزکے دوسرے میلبرن ٹیسٹ کے پہلے روز پاکستان نے پہلی اننگز میں چار وکٹوں پر ایک سو بیالیس رنزبنائے تھے۔ میلبرن ٹیسٹ کے پہلے دن کا کھیل بارش سے متاثر ہوا۔ مصباح الحق اور یونس خان کوئی خاطر خواہ کارکردگی دکھانے میں اس بار پھر ناکام رہے۔ میلبرن میں پاکستان نے ٹاس جیت کر بیٹنگ کا فیصلہ کیا جو کامیاب ثابت نہ ہوا اور بیٹنگ ایک بار پھر آزمائش بن گئی۔ پاکستانی ٹیم میں راحت علی کی جگہ سہیل خان کو شامل کیا گیا جب کہ آسٹریلوی ٹیم میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔اٹھارہ رنز پر سمیع اسلم نے ساتھ چھوڑدیا۔ رنز بننا شروع ہوئے تو بابر اعظم کو 23 رنز کے انفرادی اسکور پر پویلین کا پروانہ مل گیا۔

یونس خان صرف اکیس رنزبنا کر بولڈ ہوگئے۔ کپتان مصباح الحق نے چھکا لگا کر اننگز کا آغاز کیا لیکن نو رنز بنا کر وہ بھی ہمت ہارگئے۔اظہرعلی نے مزاحمت جاری رکھتے ہوئے نصف سینچری بنائی۔ بارش کے باعث چائے کا وقفہ وقت سے پہلے دیا گیا لیکن پھر کھیل شروع نہ ہوسکا۔ ابتدائی روز پچاس اعشاریہ پانچ اوورز کا کھیل ممکن ہوسکا۔دوسرے روز کے کھیل کے آغاز پر اظہر علی  اور اسد شفیق  وکٹ پرموجود ہیں۔

نیوویب ڈیسک< News Source