بھارتی فوج تقسیم ہو گئی, بڑی تعداد میں فوجیوں کا لڑائی سے انکار

بھارتی فوج تقسیم ہو گئی, بڑی تعداد میں فوجیوں کا لڑائی سے انکار

نئی دہلی: افسروں کے رویئے سے تنگ اور بھوک و پیاس کے مارے بھارتی فوجی ترقیوں کے معاملے پر تقسیم ہو گئے ہیں۔ ترقی نہ ملنے پر سروسز کور اور  انفنٹری میں کشیدگی پائی جاتی ہے۔بڑی تعداد میں فوجیوں نے لڑائی سے انکارکردیا۔


بھارتی فوج نے ڈی مورالائزڈ  ترقیوں کے معاملے پر پوسٹنگ سے انکار کر دیا۔ بھارتی فوج نفری کے بحران کا شکارہے۔ مقبوضہ کشمیر اور دیگر علیحدگی پسندتحریکوں کا سامنا کرنے والے صوبوں میں لڑائی جاری ہے۔ مخالفین کیساتھ ساتھ انفنٹری کو  سروسز   اور   نان کمبیٹ فورسز سے بھی لڑائی کاسامناہے۔جب ترقی کا مسئلہ آتاہے تو بھارتی فوج آپریشنل اور نان آپریشنل فورس میں فرق کرتی ہے۔ زیادہ فائدہ آپریشنل فورس اور انفنٹری کو  دیتی ہے۔

سروسز گروپ میں الیکٹریشن اور دیگر کام کرنے والے فوجی قیادت کی اس پالیسی پر احتجاج کرتے ہیں لیکن بھارتی فوج کی قیادت سنتی ہی نہیں۔ بھارتی فوج کی قیادت کے رویئے کے باعث ڈی مورالائزڈ  کئی فوجی افسر چھوڑ چکے ہیں۔ فوجی افسران کام کرنے سے بھی انکار کرچکے ہیں۔ کچھ نان کمبیٹنٹ فوجیوں نے تو   آرمی چیف کو خطوط لکھے  کہ ان سے لڑائی کا کام لیا جا رہا ہے۔ترقیاں صرف انفنٹری اور دیگر فوجیوں کو دی جاری ہیں۔

افسروں کے خطوط کیمطابق فوجی مسلسل بے گناہ لوگوں کو مار  کر خودکشی پر مجبور ہیں۔ جب ترقی کی بات آتی ہے تو آپریشنل اور نان آپریشنل کورز کا ایشو اٹھا یاجاتاہے۔ نان آپریشنل اور نان کمبیٹنٹ فوجیوں کو بالکل نظراندازکردیاجاتاہے۔ یہی صورتحال سکھوں کی بھی ہے۔ سکھ سپاہیوں اور افسروں کے رشتہ داروں کا کہناہے کہ انہیں سرحدوں اور تنازع کی جگہ پر بھیجا جارہا ہے۔ایک ٹوئٹ کے مطابق سکھ فوجی سرحدوں پر لڑائی اور علیحدگی پسندوں سے لڑ کر تنگ آچکے ہیں۔

نیوویب ڈیسک< News Source