'عمران کے وزیراعظم بننے سے پاکستان کے سفارتی اور معاشی تعلقات کو خطرہ ہے'

'عمران کے وزیراعظم بننے سے پاکستان کے سفارتی اور معاشی تعلقات کو خطرہ ہے'

وزیراعظم بننے کا تقاضہ ہے کہ عمران خان کو سمجھوتے کرنے پڑیں گے، ریحام۔۔۔۔فائل فوٹو

لاہور: بھارتی میڈیا کو دیئے گئے انٹرویو میں ریحام خان نے کہا کہ انہوں نے پہلے ہی بتا دیا تھا کہ سلیکشن ہو چکی ہے اب صرف تاج پہنایا جائے گا جبکہ عالمی میڈیا انتخابات سے قبل دھاندلی پر شور مچاتا رہا۔

 

ان کا کہنا تھا کہ اگر آپ عمران خان کی باڈی لینگویج دیکھیں تو وہ خوش اور مطمئن نظر نہیں آ رہے تھے کیونکہ انہوں نے اپنے وقار پر سمجھوتہ کیا ہے۔

 

وزیراعظم کی حیثیت سے ملک کو درپیش چلینجز کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت کے سوال پر ریحام خان کا کہنا تھا کہ عمران خان اقتدار کی مسند پر بیٹھنا بہت آسان سمجھتے ہیں لیکن جس کے سر پر تاج ہوتا ہے اور نیند اس کی ہی حرام ہوتی ہے۔

 

مزید پڑھیں: سعد رفیق نے دوبارہ گنتی کیلئے درخواست جمع کرا دی

 

ریحام خان نے کہا کہ وزیراعظم بننے کا تقاضہ ہے کہ عمران خان کو سمجھوتے کرنے پڑیں گے۔ قربانیاں دینا ہوں گی اور آنے والے چند دن خود ہی ثابت کر دیں گے کہ وہ اس کے لیے کتنا تیار ہیں۔

 

ان کا کہنا تھا اتنی بھاری ذمہ داری کے ساتھ عمران خان سے عوام کو بہت زیادہ توقعات وابستہ ہوں گی جیسا کہ میں نے کہا کہ جس سر پر تاج ہوتا ہے وہ سب سے زیادہ بے آرام ہوتا ہے۔ وزارت عظمیٰ اتنا آسان کام نہیں جتنا وہ سمجھتے رہے ہیں۔ پنجاب عمران خان کے لیے سب سے کٹھن مرحلہ ہو گا اور عمران خان کو سمجھوتے کرنے پڑیں گے جو ساتھی ان کے ساتھ مشکل میں کھڑے رہے ان کے لیے قربانیاں دینا ہوں گی۔

 

خارجہ پالیسی کے متعلق سوال پر ریحام خان نے کہا کہ ماضی میں عمران خان اور ان کے وزراء خارجہ پالیسی امور سے متعلق متنازع بیانات دیتے رہے ہیں۔ اب پاکستانی فکر مند ہیں کہ عالمی منظر نامے پر عمران خان قوم کی نمائندگی کریں گے۔

 

انہوں نے کہا میں آپ کو اعتماد کے ساتھ بتا سکتی ہوں کہ پاکستانی بہت فکرمند ہیں۔ لوگ حیران و پریشان تھے کہ ہم یہ نہیں چاہتے اور آخر دنیا کیا کہے گی؟۔ وہ دھاندلی پر نہیں وزارت عظمیٰ کے منصب کے لیے عمران خان کے موزوں ہونے پر گفتگو کر رہے تھے۔

 

یہ بھی پڑھیں: تحریک انصاف کو قومی اسمبلی کی 110 نشستوں کے ساتھ برتری حاصل، سرکاری نتائج

ان کا مزید کہنا تھا کہ عمران خان کے وزیراعظم بننے سے پاکستان کے سفارتی اور معاشی تعلقات کو خطرہ لاحق ہو گیا ہے۔

 

واضح رہے کہ 25 جولائی کو ہونے والی پولنگ کے نتائج کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کو واضح برتری حاصل ہوئی ہے اور پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان ملک کے نئے وزیراعظم ہوسکتے ہیں۔

 

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں