پنجاب کمپنیز کرپشن کیس، خزانے کی بندر بانٹ کی اجازت نہیں دے سکتے، چیف جسٹس

پنجاب کمپنیز کرپشن کیس، خزانے کی بندر بانٹ کی اجازت نہیں دے سکتے، چیف جسٹس
ڈی جی نیب لاہور اور چیف سیکرٹری پنجاب عدالت کے روبرو پیش ہوئے۔۔۔۔فائل فوٹو

لاہور: چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار نے پنجاب کمپنیز کرپشن کیس کی سماعت کے دوران کہا ہے کہ قومی خزانے کی بندر بانٹ کی اجازت نہیں دے سکتے۔


سپریم کورٹ میں پنجاب کی 56 کمپنیز سے متعلق از خود نوٹس کیس کی سماعت ہوئی۔ ڈی جی نیب لاہور اور چیف سیکرٹری پنجاب عدالت کے روبرو پیش ہوئے۔ پنجاب حکومت نے جواب جمع کرایا جس میں کہا گیا کہ 346 سرکاری افسران کو 56 کمپنیز میں بھیجا گیا جن کی فہرست نیب کو فراہم کر دی ہے۔

مزید پڑھیں: عمران خان عوامی انداز میں وزارت عظمیٰ کا حلف اٹھانے کے خواہشمند

سپریم کورٹ نے ان تمام افسران کو نوٹس جاری کرتے ہوئے کل طلب کر لیا اور اپنا موقف پیش کرنے کا حکم دیا۔ چیف جسٹس نے سرکاری شعبے سے کمپنیز میں جانے والے تمام چیف ایگزیکٹیو افسران (سی ای اوز) کی فہرست بھی فوری طور پر پیش کرنے کا حکم دیا۔

جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ سرکاری افسر کے طور پر کیپٹن عثمان پنجاب حکومت سے ایک لاکھ چالیس ہزار روپے تنخواہ لے رہا تھا لیکن کمپنی میں جا کر 14 لاکھ روپے تنخواہ لے رہا ہے ہم ان افسران کو دیے جانے والے سارے پیسے واپس لے کر ڈیم فنڈ میں جمع کرائیں گے۔ یہ عوام کے پیسے ہیں جن کی بندر بانٹ ی اجازت نہیں دے سکتے جبکہ اسپتالوں میں مریضوں کے لیے دوائیاں نہیں ہیں اور افسران عیاشیاں کر رہے ہیں۔

سپریم کورٹ نے کمپنیز میں تین لاکھ سے زائد تنخواہ لینے والے تمام افسران کو کل طلب کر لیا۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں