سارک اجلاس،سشما سوراج اجلاس کے دوران ہی اٹھ کرچلی گئیں:شاہ محمود قریشی

سارک اجلاس،سشما سوراج اجلاس کے دوران ہی اٹھ کرچلی گئیں:شاہ محمود قریشی
تصویر بشکریہ انڈیا ٹی وی

نیویارک: بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج سارک وزرائے خارجہ اجلاس ادھورا چھوڑ کر چلی گئیں۔


تفصیلات کے مطابق پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارتی وزیرخارجہ سے میری بات نہیں ہوئی، سشما سوراج اجلاس کے دوران ہی اٹھ کرچلی گئیں۔خیال رہے کہ وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی نے سارک وزرائے خارجہ اجلاس میں شرکت کی تاہم ان کی بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج سے بات نہ ہوسکی۔

سشما سوراج نے بھارتی میڈیا کے سوالوں کے جواب بھی نہیں دیئے تاہم پاکستانی وزیر خارجہ کا میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا ہوسکتا ہے سشما سوراج کی طبیعت ناساز ہو، میں نے سشما سوراج کی بات غورسے سنی، انہوں نے علاقائی تعاون کی بات کی۔

شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ میراسوال یہ ہے کہ علاقائی تعاون ممکن کیسے ہوگا، جب خطے والے مل بیٹھنے کو تیار ہیں اور آپ اس بیٹھک میں رکاوٹ ہیں، مجھے سمجھائیے کہ اس خطے کی اورعلاقائی تعاون کی پیش رفت کیسے ممکن ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں فورم سے کچھ حاصل کرنا ہے تو آگے بڑھنا ہوگا، آگے بڑھنے کیلئے اگلی میٹنگ طے کرنی ہوگی، سارک کے راستے، ترقی اور خطے کی خوشحالی میں صرف ایک رکاوٹ ہے، ایک ملک کا رویہ سارک کی روح کو ناکام کررہا ہے۔

قریشی کا کہنا تھا کہ اس ادارے کے مقصد کا اظہار تو کرتے ہیں لیکن تسلسل سے پیش رفت نہیں ہوپائی، پاکستان سارک فورم کو نتیجہ خیز دیکھنا چاہتاہے۔واضح رہے کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی اجلاس کے موقع پر سارک ممالک کے وزرائے خارجہ کی ملاقات ہوئی تاہم بھارتی وزیرخارجہ اپنا بیان دے کر اجلاس سے چلی گئیں۔سشما سوراج صرف آدھا گھنٹہ اجلاس میں موجود رہیں، بھارتی میڈیا بھی سشما سوراج کا انتظارکرتا رہ گیا انہوں نے بھارتی میڈیا سے بھی کوئی گفتگو نہیں کی۔

سشما سوراج اور شاہ محمود قریشی میں کوئی رسمی ملاقات ہوئی نہ ہی مصافحہ ہوا۔خیال رہے کہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اقوام متحدہ کے جنرل اسمبلی اجلاس میں شرکت کی غرض سے اِن دنوں امریکہ میں موجود ہیں، جہاں 29 ستمبر کو نیویارک میں وہ جنرل اسمبلی سے خطاب کے دوران عالمی امور پر پاکستان کا موقف پیش کریں گے، جبکہ کشمیریوں پر ہونے والے بھارتی مظالم بھی دنیا کے سامنے رکھیں گے۔