ڈیزائن چوری ہونے پر نوکیا نے ایپل سے 2 ارب ڈالر وصول کر لیے

نیویارک: مایہ ناز امریکی کمپنی ایپل نے ڈیزائن چوری کرنے پر موبائل کمپنی نوکیا کو 2 ارب ڈالر دے دیے۔ایپل پر الزام تھا کہ اس نے معروف موبائل ساز کمپنی نوکیا کے سافٹ ویئرز، ویڈیو کالنگ، چِپِ سیٹ، ڈسپلے اسکرین اور اینٹینا سمیت دیگر چیزوں کے ڈیزائن چوری کیے تھے۔

ڈیزائن چوری ہونے پر نوکیا نے ایپل سے 2 ارب ڈالر وصول کر لیے

نیویارک: مایہ ناز امریکی کمپنی ایپل نے ڈیزائن چوری کرنے پر موبائل کمپنی نوکیا کو 2 ارب ڈالر دے دیے۔ایپل پر الزام تھا کہ اس نے معروف موبائل ساز کمپنی نوکیا کے سافٹ ویئرز، ویڈیو کالنگ، چِپِ سیٹ، ڈسپلے اسکرین اور اینٹینا سمیت دیگر چیزوں کے ڈیزائن چوری کیے تھے۔


نوکیا کے مطابق ایپل نے اپنی چیزوں کو ان کے چوری کیے گئے ڈیزائن سے تیار کیا، نوکیا کا دعویٰ تھا کہ اس نے ان تمام آلات کے پیٹنٹ خرید رکھے تھے۔نوکیا اور ایپل کے درمیان آلات کے ڈیزائن چوری کرنے اور پیٹنٹ کے معاملے پر کئی ماہ تنازع چلتا رہا، نوکیا نے عالمی پیٹنٹ عدالت سے رجوع کرنے کا بھی اعلان کیا، مگر بعد ازاں دونوں کمپنیوں کے درمیان ایک معاہدہ طے پاگیا۔

دونوں کمپنیوں کے درمیان رواں برس مئی میں معاہدہ طے پایا تھا کہ ایپل موبائل ساز کمپنی نوکیا کو جرمانے کی مد میں 2 کروڑ ڈالر ادا کرے گی۔نوکیا کی مصنوعات سے متعلق خبریں اور معلومات نشر کرنے والی ویب سائٹ نوکیا موب ڈاٹ نیٹ نے تصدیق کی کہ ایپل نے جرمانے کے 2 ارب ڈالر ادا کردیے۔نوکیا عہدیداروں نے اس بات کی تصدیق کی ایپل نے انہیں جرمانے کی رقم یوروز میں ادا کی۔ایپل نے نوکیا کو ایک ارب 70 کروڑ یوروز 29 جولائی کو ادا کردیے۔