پیپلز پارٹی اور ن لیگ کا اسمبلیوں سے حلف لینے کا فیصلہ

10:19 AM, 29 Jul, 2018

اسلام آباد:عام انتخابات 2018 ءمیں شکست اور نتائج پر تحفظات کے باوجود پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) نے اسمبلیوں سے حلف لینے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق 25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں بڑی جماعتوں کی جانب سے بے ضابطگیوں اور دھاندلی کے الزامات لگائے جارہے ہیں تاہم آئندہ کے لائحہ عمل کے لیے مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے وفود کی ملاقات آج ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں:عمران خان 14 اگست تک وزیراعظم کا حلف اٹھالیں گے

دونوں جماعتوں نے اتفاق کیا ہے کہ معاملات کو اسمبلیوں میں لے کر جائیں گے جب کہ دونوں جماعتوں کی مشترکہ کمیٹی آج سیاسی رہنماوں سے ملاقات بھی کرے گی۔

پیپلز پارٹی کے رہنما خورشید شاہ نے کہا کہ شہباز شریف کو بتا دیا کہ پیپلز پارٹی انتخابی نتائج پر تحفظات کے معاملے کو پارلیمنٹ میں لڑنا چاہتی ہے۔

پیپلز پارٹی کی کمیٹی میں نوید قمر، یوسف رضا گیلانی، راجہ پرویز اشرف، شیری رحمان اور قمر زمان کائرہ شامل ہیں جب کہ مسلم لیگ ن کی کمیٹی میں شاہد خاقان عباسی، خواجہ سعد رفیق اور ایاز صادق شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:این اے 131، دوبارہ گنتی میں بھی سعد رفیق ہار گئے

خورشید شاہ نے مزید کہا کہ کمیٹیاں مشترکہ طور پر ایم ایم اے کی قیادت کے علاوہ عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار ولی، پشتونخواہ ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود اچکزئی اور ایم کیو ایم رہنما فاروق ستار سے بھی ملاقاتیں کریں گی۔رہنما پیپلز پارٹی نے کہا کہ تمام جماعتوں کو اسمبلیوں سے حلف نہ اٹھانے کا فیصلہ واپس لینے پر قائل کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں:سینئر پی ٹی آئی رہنما اعجاز احمد چودھری کو گورنر پنجاب بنائے جانے کا قوی امکان

خیال رہے کہ 25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں تحریک انصاف کو دیگر جماعتوں کے مقابلے میں واضح برتری حاصل ہے اور وہ اتحادیوں کے ساتھ مل کر حکومت بنانے کی پوزیشن میں ہے۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں

 

مزیدخبریں