ن لیگ نے پارٹی رہنماؤں کی مسلح افواج اور ایجنسیوں سے ملاقاتوں پر پابندی لگا دی

ن لیگ نے پارٹی رہنماؤں کی مسلح افواج اور ایجنسیوں سے ملاقاتوں پر پابندی لگا دی
ملاقات ذاتی، سرکاری یا کسی بھی نوعیت کی نہیں ہو گی، ہدایت نامہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

لندن: پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف نے پارٹی رہنماؤں کی مسلح افواج اور ایجنسیوں سے ملاقاتوں پر پابندی لگا دی۔سابق وزیراعظم کی جانب سے پارٹی رہنماؤں کیلئے بھیجا گیا ہدایات نامہ پارٹی سیکرٹری جنرل احسن اقبال نے جاری کر دیا۔ 


ہدایت نامے کے مطابق ملاقات ذاتی، سرکاری یا کسی بھی نوعیت کی نہیں ہو گی۔ اگر ملاقاتیں اچھی نیت سے بھی کی جائیں تو بھی ان سے تنازعات جنم لیتے ہیں۔

ہدایت نامے میں کہا گیا ہے کہ قومی سلامتی اور آئینی ذمہ داریوں سے متعلق ملاقات ضروری ہو تو نواز شریف کی منظوری سے کی جائیگی۔

خیال رہے کہ گزشتہ دنوں میں سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر جاری بیان میں نواز شریف نے پارٹی ارکان کی عسکری قیادت اور خفیہ ایجنسی کے نمائندوں سے ملاقاتوں پر پابندی عائد کرنے کا اعلان کیا تھا۔

گزشتہ دنوں عسکری قیادت اور پارلیمانی رہنماؤں کی ملاقات کا معاملہ سامنے آیا تھا اور اس حوالے سے وزیرریلوے شیخ رشید کاکہنا تھا کہ شہباز شریف، بلاول بھٹو، سراج الحق سمیت عوامی نیشنل پارٹی(اے این پی) اور جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی) کے رہنما بھی شریک تھے۔

علاوہ ازیں ڈی جی آئی ایس پی آر نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے بتایا تھا کہ آرمی چیف سے محمد زبیر کی دو بار ملاقاتیں ہوئیں، آرمی چیف سے محمد زبیر نے اگست کے آخر میں ملاقات کی اور ملاقات میں ڈی جی آئی ایس آئی بھی موجود تھے۔ ن لیگ کے رہنما محمد زبیر نے 7 ستمبر کو بھی ملاقات کی اور دونوں ملاقاتیں محمد زبیر کی درخواست پر ہوئیں، ملاقات میں نواز شریف اور مریم نواز سے متعلق بھی باتیں ہوئیں۔