روس سے ہمارے سفارت کاروں کی بیدخلی افسوس ناک ہے، امریکا

واشنگٹن:   امریکا نے روس میں تعینات ساڑھے سات سو سے زائد سفارت کاروں کی بیدخلی کے اقدام پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ روسی اقدام انتہائی افسوس ناک اور قابل مذمت ہے۔امریکی سفارت کاروں کی بیدخلی کا حکم روسی صدر ولادیمیر پوٹن کی جانب سے جاری کیا گیا ہے۔

روسی نیوز ایجنسی اتار تاس کے مطابق صدر پیوٹن نے امریکی سفارت کاروں کی تعداد اتنی ہی رکھنے کا فیصلہ کیا ہے، جتنی تعداد امریکی دارالحکومت واشنگٹن میں تعینات روسی سفارت کاروں کی ہے۔ روسی صدر کے اس حکم کو امریکا کی جانب سے عائد کی جانے والی نئی پابندیوں کا ردعمل قرار دیا جا رہا ہے ۔

اس مناسبت سے روسی صدر پیوٹن نے مقامی نشریاتی ادارے وی جی ٹی آر کے کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ اس بات کا بہت عرصے سے انتظار کیا جا رہا تھا کہ امریکی حکومت روس کے ساتھ اپنے رویے کو بہتر بنائے گی، لیکن حالات میں کوئی تبدیلی پیدا نہیں ہوئی ہے۔ پیوٹن نے کہا کہ اب فیصلہ کیا گیا  ہے کہ اس صورت حال کا کوئی مناسب اور بھرپور جواب دیا جائے۔

روسی صدر نے امریکا پر مزید روسی پابندیوں کے حوالے سے کہا کہ ایسا ممکن ہے لیکن وہ ایسی پابندیوں کو عائد کرنے کے مخالف ہیں۔دوسری جانب امریکی وزارت خارجہ کے ایک اہلکار نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ کو بتایا کہ یہ روسی اقدام انتہائی افسوس ناک اور قابل مذمت ہے۔

اہلکار کے مطابق روس نے امریکی حکام کو بتایا ہے کہ یکم ستمبر سے ماسکو میں امریکی سفارت خانے میں 455 سے زائد امریکی اہلکار موجود نہیں ہونے چاہییں۔  اہلکار نے واشنگٹن پوسٹ کو بتایا  کہ اس فیصلے کے اثرات کا جائزہ لینے کا عمل شروع کر دیا   گیا ہے۔

مصنف کے بارے میں