طلباءنے حکومت سے امتحانات فوری طور پر اگست تک ملتوی کرنے کا مطالبہ کر دیا

طلباءنے حکومت سے امتحانات فوری طور پر اگست تک ملتوی کرنے کا مطالبہ کر دیا
سورس: فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر

لاہور: طلباءنے وزارت تعلیم کی طرف سے انتخابات کے اعلان کو مسترد کرتے ہوئے حکومت سے امتحانات کو فوری طور پراگست تک ملتوی کرنے کا مطالبہ کیا اور کہا ہے کہ اگر ہمارے مطالبات تسلیم نہ کئے گئے تو جمعہ 4 جون سے ملک بھر میں احتجاج کیا جائے گا۔ 

تفصیلات کے مطابق نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے طلباءکے نمائندہ عمار الطاف ستی، عمار عمران، عبدالمقیت منان و دیگر نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ پورے سال صرف 45 دن فزیکل کلاسز کی وجہ سے طلباءکی امتحانات کیلئے تیاری نہیں ہو سکی لیکن وزارت تعلیم نے اچنک امتحانات کا اعلان کر دیا ہے، آن لائن کلاسز کی وجہ سے تیاری مکمل نہیں ہو سکی لہٰذا حکومت فوری طور پر امتحانات کو ملتوی کرے اور طلباءکو تیاری کا منساب وقت دے تاکہ طلباءبہتر انداز میں امتحانات دے سکیں۔ 

طلباءکا کہنا تھا کہ بہت سارے طلباءگلگت بلتستان، آزاد کشمیر اور قبائلی علاقوں سے تعلق رکھتے ہیں جہاں انٹرنیٹ کی سہولیات بھی دستیاب نہیں ہیں ایسے طلباءکیسے امتحانات دے سکتے ہیں، حکومت امتحانات کو فوری طور پر ملتوی کرے اور اگر بہت ہی ضروری ہو تو طلباءکو اگست تک کا وقت دیتے ہوئے 50 فیصد سلیبس سے آن لائن امتحانات لئے جائیں اور امتحانات سے قبل تمام طلباءکی ویکسی نیشن کی جائے۔ 

طلبا کا بھی کہنا تھا کہ ان کے سیکنڈ ایئر کے نتائج کا اثر فرسٹ ایئر کے رزلٹ پر بھی پڑے گا، وزارت تعلیم کا کام ہی طلباءکے مسائل کا حل ہے اگر وزارت یہ کام نہیں کر سکتی تو اسے ختم کر دینا چاہیئے لہٰذا یہ طلباءکے مستقبل کا سوال ہے، حکومت طلباءکے مسائل کو حل کرے اور ان کے جائز مطالبات کو تسلیم کرے بصورت دیگر ملک بھر کے طلباءچار جون بروز جمعہ سے ملک گیر احتجاج کریں گے اور پھر حکومت کیلئے ان کے احتجاج پر قابو پانا ممکن نہیں ہو گا۔