پناہ گزینوں کا پیدائشی حقِ شہریت ختم کر دینا چاہتا ہوں، امریکی صدر

پناہ گزینوں کا پیدائشی حقِ شہریت ختم کر دینا چاہتا ہوں، امریکی صدر
اس فیصلے کے نفاذ کے بعد انہیں قانونی اعتراضات کا سامنا کرنا پڑے گا، صدر ٹرمپ۔۔۔۔۔فائل فوٹو

واشنگٹن: امریکی نشریاتی ادارے کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ وہ غیر قانونی پناہ گزینوں اور غیر ملکیوں کے بچوں کو دیے گئے حقِ شہریت کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔


صدر ٹرمپ کے مطابق امریکا وہ واحد ملک ہے جہاں غیر ملکی غیر قانونی طور پر آتے ہیں اور یہاں پیدا ہونے والا ان کا بچہ پیدا ئشی طور پر امریکی شہری ہو جاتا ہے جبکہ اس سلسلے کو اب ختم ہو جانا چاہیے۔

صدر ٹرمپ نے مزید کہا کہ انہیں معلوم ہے کہ ایسا وہ صرف ایگزیکٹو آرڈر کے ذریعے ہی کر سکتے ہیں اور اس فیصلے کے نفاذ کے بعد انہیں قانونی اعتراضات کا سامنا کرنا پڑے گا۔

غیرقانونی پناہ گزینوں کے خاتمے کا وعدہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی مہم کا حصہ تھا۔ صدر بننے کے بعد بھی غیر قانونی امیگریشن کا معاملہ صدر ٹرمپ کے ایجنڈے میں سب سے اوپر رہا ہے۔

وسط مدتی انتخابات کے بعد امیگریشن سے متعلق سخت ترین نئی پالیسی نافذ کی جا سکتی ہے۔امریکا کے آئین کی 14 ویں ترمیم ملک میں پیدا ہونے والے بچے کو شہریت دینے کی ضمانت دیتی ہے۔

امریکا میں رہائش پذیر غیر ملکی افراد کی تعداد سال 2017 میں 4 کروڑ 45 لاکھ تک جا پہنچی تھی۔ مغربی ممالک سمیت دنیا بھر میں 30 سے زائد ممالک بچوں کو پیدائشی شہریت کا حق دیتے ہیں۔