کراچی: منگھو پیر سے 6 سالہ بچی کی تشدد زدہ لاش برآمد، لواحقین کا احتجاج

کراچی : شہر قائد کے علاقے منگھوپیر میں کچرا کنڈی سے ملنے والی 6 سالہ بچی کی شناخت رابعہ کے نام سے ہو گئی۔ دوسری جانب بچی کے لواحقین کی جانب سے کٹی پہاڑی پر مظاہرے کے دوران پولیس پر پتھراؤ کے نتیجے میں ایک اہلکار زخمی ہو گیا جبکہ پولیس کی ہوائی فائرنگ سے 3 افراد زخمی ہو گئے۔

 

یہ خبر بھی پڑھیں: 'اگر قانون اجازت دے تو عصمت دری کرنیوالے ڈی ایس پی کو سرعام گولی ماری جائے'

پولیس کے مطابق مقتولہ بچی اورنگی ٹاؤن بلوچ پاڑہ کی رہائشی تھی جو اتوار کو گھر سے کھیلنے کے لیے نکلی تھی اور اس کے بعد لاپتہ ہو گئی تھی۔

پولیس کے مطابق بچی کے والد نے تھانہ اورنگی ٹاؤن میں گمشدگی کا مقدمہ درج کرایا تھا۔ تاہم گذشتہ روز بچی کی تشدد زدہ لاش منگھو پیر میں ایک کچرا کنڈی سے برآمد ہوئی۔

پولیس کے مطابق بچی کے ڈی این اے کے سیمپل لے لیے گئے ہیں اور رپورٹ آنے کے بعد تحقیقات میں پیش رفت ہو سکے گی۔

مزید پڑھیں: کسی بھی سیاسی جماعت سے مذاکرات کے دروازے بند نہیں، خورشید شاہ

بچی کے لواحقین نے ملزمان کی گرفتاری کے لیے احتجاج کرتے ہوئے کٹی پہاڑی جانے والی سڑک ٹریفک کے لیے بند کر دی۔

مظاہرین سے مذاکرات کے لیے پولیس کی بھاری نفری بھی کٹی پہاڑی پہنچی تاہم پتھراؤ ہونے پر پولیس کی جانب سے ہوائی فائرنگ اور مظاہرین پر لاٹھی چارج کیا گیا۔آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے ڈی آئی جی ویسٹ سے تفصیلی انکوائری رپورٹ طلب کر لی ہے۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں