جیلوں میں قید 80 ہزار قیدی انتخابات میں ووٹ دینے سے محروم

جیلوں میں قید 80 ہزار قیدی انتخابات میں ووٹ دینے سے محروم

قیدیوں کے ووٹ دینے کے حوالے سے الیکشن کمیشن کی جانب سے کوئی اقدامات سامنے نہیں آئے۔۔۔۔فائل فوٹو

لاہور: ملک بھر کی جیلوں میں قید 80 ہزار شہری "حق اور سہولت" کے باوجود انتخابات میں ووٹ دینے سے محروم ہیں۔

 

جیل مینوئل کے مطابق کسی بھی قیدی کو انتخابی عمل میں حصہ لینے کا حق حاصل ہے اور قیدی بیلٹ پیپر بذریعہ جیل انتظامیہ متعلقہ پریذائیڈنگ افسر کو درخواست دے کر بیرک میں منگوا سکتا ہے تاہم قیدیوں کے ووٹ دینے کے حوالے سے الیکشن کمیشن کی جانب سے کوئی اقدامات سامنے نہیں آئے۔

 

مزید پڑھیں: کرپشن کے الزامات پر احسن اقبال نے ابرار الحق کو لیگل نوٹس بھیج دیا

پنجاب کی 40 مختلف جیلوں میں ایک ہزار خواتین سمیت 49 ہزار 100 قیدی ہیں جب کہ سندھ کی 26 جیلوں میں 200 خواتین سمیت قیدیوں کی تعداد 19 ہزار سے زائد ہے۔ اسی طرح خیبر پختونخوا کی 23 جیلوں میں 220 خواتین سمیت 10 ہزار 50 اور بلوچستان کی 11 مختلف جیلوں میں 20 خواتین سمیت 2100 سے زائد قیدی موجود ہیں۔

 

سابق آئی جی جیل نصرت منگن کا کہنا ہے کہ 2013 کے انتخابات میں بھی قیدیوں کو ووٹ ڈالنے کی سہولت نہیں دی گئی جب کہ 2008 کے الیکشن میں سندھ میں محض 10 قیدیوں کے ووٹ کاسٹ کرائے گئے۔

 

یہ بھی پڑھیں: اڈیالہ جیل میں قید نواز شریف کا پہلا پیغام سامنے آگیا

نصرت منگن نے کہا کہ قیدی اپنا ووٹ مرضی کے امیدوار کو کاسٹ کر کے سربمہر لفافہ پریزائیڈنگ افسر کو بھیج سکتا ہے تاہم قیدیوں کو ووٹ کے حق سے متعلق شعور یا آگاہی نہیں ہے۔ سابق آئی جی جیل کا مزید کہنا تھا کہ جیلوں میں قیدیوں کے ووٹ دینے کا عمل الیکشن سے پہلے ایک ہفتے میں مکمل ہوجانا چاہیے لیکن اب تک ایسا نہیں ہو سکا۔

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں